X

فیکٹ چیک: کباڑ کاروباری کے دعوی کے ساتھ وائرل ہو رہی نواب ملک کی یہ تصویر ایڈیٹڈ اور فرضی ہے

مہاراشٹر کی نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے لیڈر نواب ملک کے کباڑ کے کاروباری ہونے کے دعوے کے ساتھ وائرل ہونے والی یہ تصویر ایڈٹ اور جعلی ہے۔ ملک اور ان کا خاندان کباڑ کے کاروبار میں شامل ہے لیکن وائرل ہونے والی تصویر ان کی نہیں ہے۔ پروپیگنڈے کی نیت سے ایڈیٹنگ کر کے سوشل میڈیا پر وائرل کیا جا رہا ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: December 4, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ مہاراشٹر میں آریان خان ڈرگ کیس میں اپنے بیانات کی وجہ سے سرخیوں میں آنے والے نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے لیڈر نواب ملک کی ایک تصویر سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے، جس میں انہیں بھنگڑ یا کباڑ کی دکان کے سامنے دیکھا جا سکتا ہے۔ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ یہ تصویر نواب ملک کی ہے جب وہ کباڑ کا کاروبار کرتے تھے اور اس بات کی تحقیقات کی ضرورت ہے کہ آخر نواب ملک اسکریپ ڈیلر سے اتنے امیر کیسے ہو گئے۔

وشواس نیوز کی جانچ میں وائرل ہونے والی تصویر فرضی اور ایڈیٹ شدہ نکلی۔ یہ درست ہے کہ نواب ملک کا کباڑ کا کاروبار تھا اور اب بھی ان کا خاندان اس کاروبار سے منسلک ہے، لیکن وائرل ہونے والی تصویر ان کی نہیں ہے۔

وائرل پوسٹ میں کیا ہے؟

وائرل تصویر کو شیئر کرتے ہوئے، فیس بک صارف ‘وجئے سنگھ’ نے لکھا، “آج ایک کباڑی نواب ملک کے پاس اتنی دولت کیسے اور کہاں سے آئی، اس @#$@#$ کی بھی سخت تحقیقات ہونی چاہئیں۔

سوشل میڈیا پر کئی دیگر صارفین نے اس تصویر کو اسی طرح اور اسی طرح کے دعووں کے ساتھ شیئر کیا ہے۔

پڑتال

وائرل امیج کی گوگل ریورس امیج سرچ کرنے پر، ہمیں ہیمونس آف انڈیا ویب سائٹ پر پوسٹ کی گئی ایک رپورٹ ملی، جس میں اصل تصویر دیکھی جا سکتی ہے۔ ذیل میں دکھائے گئے کولاج میں یہ واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے کہ اس تصویر کو کیسے ایڈٹ کر کے نواب ملک کی تصویر شامل کی گئی ہے۔

پوسٹ میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ نواب ملک کباڑ کا کاروبار کرتے تھے اور اب ان کے بہت بڑے اثاثے ہیں جس کی تحقیقات ہونی چاہیے۔ متعلقہ مطلوبہ الفاظ کے ساتھ تلاش کرنے پر، ہمیں 3 نومبر 2021 کو بی بی سی ہندی کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والی ایک رپورٹ ملی، جس کے مطابق، نواب ملک کا خاندان، جو کہ اصل میں اتر پردیش کے بلرام پور ضلع سے ہے، کباڑ کے کاروبار کے علاوہ، بہت سے چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروبار سے وابستہ تھا۔

رپورٹ میں نواب ملک کا بیان بھی شامل ہے، جس میں انہوں نے اعتراف کیا کہ وہ اور ان کا خاندان کباڑ کا کاروبار کرتے ہیں۔ اس نے کہا، ‘ہاں، میں کباڑ ڈیلر ہوں۔ میرے والد ممبئی میں کپڑے اور کباڑ کا کاروبار کرتے تھے۔ میں نے ایم ایل اے بننے تک کباڑ کا کاروبار بھی کیا۔ میرا خاندان اب بھی کرتا ہے۔ مجھے اس پر فخر ہے‘۔

نیوز سرچ میں فری پریس جرنل کی ویب سائٹ پر نیوز ایجنسی آئی اے این ایس کی رپورٹ ملی، جو نواب ملک کے تعارف اور ان کے اب تک کے سیاسی سفر سے متعلق ہے۔


رپورٹ میں دی گئی معلومات کے مطابق، ‘ان کے (نواب ملک) کے والد محمد اسلام ملک نے جنوبی ممبئی کے ڈونگری میں کباڑ (چندی) کا کام شروع کیا اور بعد میں وہ کرلا شفٹ ہو گئے۔ کرلا میں ہی نواب ملک نے اپنے والد کے کباڑ کے کاروبار میں مدد کی تھی۔آئی اے این ایس سے بات کرتے ہوئے ملک نے کہا، “تو… کباڑ ڈیلر ہونے میں کیا حرج ہے؟ ہم کچرہ کو پیسے میں تبدیل کر کے قوم کی خدمت کر رہے ہیں جو کہ ماحول کے لیے بھی اچھا ہے۔

ہمارے ساتھی دینک جاگرن کے ممبئی بیورو چیف اوم پرکاش تیواری نے کہا کہ یہ سچ ہے کہ نواب ملک کا خاندان اور وہ خود بھی کباڑ کے کاروبار میں تھے اور اب ان کا خاندان اس کاروبار میں اب بھی ہے۔

نواب ملک 2019 کے مہاراشٹر قانون ساز اسمبلی کے انتخابات میں انوشکتی نگر اسمبلی سیٹ سے نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی ) کے امیدوار تھے اور اس سیٹ سے الیکشن جیتنے میں بھی کامیاب رہے تھے۔ الیکشن کمیشن کو اپنے حلف نامے میں، انہوں نے اپنی آمدنی کا ذریعہ ‘زراعت اور کاروبار’ بتایا ہے اور ‘ایم/ایس ملک انفراسٹرکچر’ اور ‘M/S ملک اسٹیلز’ میں شراکت دار ہے۔

جھوٹے دعوے کے ساتھ وائرل پوسٹ شیئر کرنے والے صارف کا پروفائل مئی 2015 سے فیس بک پر ایکٹیو ہے۔

نتیجہ: مہاراشٹر کی نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے لیڈر نواب ملک کے کباڑ کے کاروباری ہونے کے دعوے کے ساتھ وائرل ہونے والی یہ تصویر ایڈٹ اور جعلی ہے۔ ملک اور ان کا خاندان کباڑ کے کاروبار میں شامل ہے لیکن وائرل ہونے والی تصویر ان کی نہیں ہے۔ پروپیگنڈے کی نیت سے ایڈیٹنگ کر کے سوشل میڈیا پر وائرل کیا جا رہا ہے۔

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later