X

فیکٹ چیک: 2018 کی کوشامبی کی تصویر کسانوں سے جوڑ کر ہو رہی فرضی دعوی کےساتھ وائرل

وشواس نیوز نے اس تصویر کو چیک کیا اور ہمیں معلوم ہوا کہ یہ تصویر 2018 کے کوشامبی کی ہے۔ اس تصویر کا کسانوں سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: October 12, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ ایک تصویر سوشل میڈیا پر وائرل ہورہی ہے جس میں ایک آدمی کی لاش جیپ کے اندر پڑی ہے اور ایک پولیس اہلکار اس پر پیر رکھے ہوئے نظر آرہا ہے۔ اس تصویر کو یوپی میں کسانوں کی حالیہ موت سے جوڑ کر شیئر کیا جا رہا ہے۔ وشواس نیوز نے اس تصویر کو چیک کیا تو ہمیں معلوم ہوا کہ یہ تصویر 2018 کی کوشامبی کی ہے۔ اس تصویر کا کسانوں سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

وائرل پوسٹ میں کیا ہے؟

ایک فیس بک صارف نے وائرل پوسٹ شیئر کی جس میں بنگالی زبان میں لکھا تھا، اردو ترجمہ: ’اتر پردیش پولیس شہید کسانوں کو ایک طرح کا احترام دے رہی ہے‘۔

پوسٹ کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھیں۔

پڑتال

اپنی تفتیش شروع کرنے کے لیے ہم نے پہلے گوگل ریورس امیج کا استعمال کرتے ہوئے وائرل تصویر تلاش کی۔ تلاش میں ہمیں یہ تصویر 18 اگست 2018 کو لائیو ہندوستان سماچار نامی ویب سائٹ پر شائع ہونے والی ایک خبر میں ملی۔ یہاں کی خبر میں دی گئی معلومات کے مطابق، ’اتر پردیش کے ضلع کوشامبی میں پولیس کا غیر انسانی چہرہ ایک بار پھر منظر عام پر آیا ہے۔ جہاں دونوں فریقوں کے درمیان جھگڑے میں 2 افراد کی ہلاکت کے بعد پولیس نے لاشوں کو جانوروں کی طرح جیپ میں بغیر پوسٹ مارٹم ہاؤس منتقل کیا۔ یہی نہیں ، جیپ میں لدی لاشوں کے ساتھ بیٹھے ہوئے سپاہی نے انسانیت کو شرمندہ کرتے ہوئے ان پر پاؤں رکھ کر تقریبا 30 کلومیٹر کا فاصلہ طے کیا۔ مکمل خبر یہاں پڑھیں۔

ہمیں اس معاملے سے متعلق خبریں یو پی پنجاب کیسری اور بریکنگ ٹیوب نامی ویب سائٹس پر بھی ملی ہیں۔ خبر کے مطابق، ’دونوں فریقوں کے درمیان کوشامبی کے گاؤں چندوپور امرائین میں جمعرات کی صبح فائرنگ ہوئی۔ اس دوران پردھان کے بھائی رام لکھن اور مخالف ایشور شرن مارے گئے۔ دوہرے قتل کے بعد حرکت کے بعد میں آنے والی پولیس نے لاشوں کو سرکاری جیپ میں پوسٹ مارٹم کے لیے بھیج دیا۔ وہ سپاہی ، جسے پی ایم کروانے کی ذمہ داری دی گئی تھی وہ جیپ میں بیٹھا میت کے سینے پر پاؤں رکھ کر بیٹھا رہا۔ سینے پر پاؤں رکھ کر کرائم سین سے پوسٹ مارٹم ہاؤس لے کر گیا۔ آپ مکمل خبر یہاں پڑھ سکتے ہیں۔

پوسٹ کی تصدیق کے لیے ہم نے دینک جاگرن کے کوشامبی بیورو چیف رپورٹر شیلیندر درویدی سے رابطہ کیا اور وائرل پوسٹ ان کے ساتھ شیئر کی۔ انہوں نے ہمیں بتایا کہ، 2018 میں جب کچھ لوگ باہمی لڑائی کی وجہ سے مر گئے تھےیہ تصویر تھی کی ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ پولیس اہلکار جو لاش پر پاؤں رکھتا نظر آرہا ہے اسے بھی معطل کر دیا گیا تھا۔

فیس بک صارف پوجا سنترا کی سوشل اسکیننگ میں ہم نے پایا کہ صارف نے خود سے متعلق کوئی معلومات پبلک نہیں کی ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے اس تصویر کو چیک کیا اور ہمیں معلوم ہوا کہ یہ تصویر 2018 کے کوشامبی کی ہے۔ اس تصویر کا کسانوں سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

  • Claim Review : اتر پردیش پولیس شہید کسانوں کو ایک طرح کا احترام دے رہی ہے
  • Claimed By : پوجا
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later