X

فیکٹ چیک: بےشمار ڈالر کا یہ ویڈیو افغانستان پر ہوئے طالبان کے قبضہ سے پہلا کا ہے

وشواس نیوز نے اپنی پڑتال میں پایا کہ یہ دعوع گمراہ کن ہے۔ بے شمار ڈالر کا یہ ویڈیو پرانا ہے، اور طالبان کے افغانستان پر ہوئے قبضہ سے پہلے کا ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: September 14, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ افغانستان پر طالبان کے قبضہ کے بعد سے سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہو رہا ہے جس میں ایک بےشمار ڈالر کے ڈھیر کو دیکھا جا سکتا ہے۔ ویڈیو کو شیئر کرتے ہوئے صارفین دعوی کر رہے ہیں کہ یہ افغانستان میں طالبان کے ہاتھ میں لگنے والا یہ ڈالر ہے۔ وشواس نیوز نے اپنی پڑتال میں پایا کہ یہ دعوع گمراہ کن ہے۔ بے شمار ڈالر کا یہ ویڈیو پرانا ہے، اور طالبان کے افغانستان پر ہوئے قبضہ سے پہلے کا ہے۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک صارف نے وائرل ویڈیو کو اپ لوڈ کرتے ہوئے لکھا، ’ افغانستان میں طالبان کے ہاتھ لگنے والا ڈالرافغانستان میں طالبان کے ہاتھ لگنے والا ڈالر‘۔

پوسٹ کے آرکائیو ورژن کو یہاں دیکھیں۔

پڑتال

اپنی پڑتال کو آگے بڑھاتے ہوئے سب سے پہلے ہم نے ان ویڈ ٹول میں ویڈیو کو اپ لوڈ کیا اور اس کے متعدد کی فریمس نکالے، اور انہیں گوگل رورس امیج کے ذریعہ سرچ کیا۔ سرچ میں ہمیں غادہ عویس نام کی صحافی کے ویری فائڈ ٹویٹر ہینڈل کی جانب سے شیئر کیا ہوا ویڈیو ملا۔ ویڈیو کو 20 فروری 2020 کو اپ کیا گیا ہے۔ حالاںکہ کیپشن میں ہمیں ویڈیو کی معلومات سے متعلق کوئی دعوی نطر نہیں آیا۔

اب تک کی پڑتال سے یہ تو واضح تھا کہ یہ ویڈیو پرانا ہے اور حال میں طالبان کے افغانستان پر ہوئے قبضہ سے پہلے کا ہے۔ حالاںکہ تفتیش کو آگے بڑھاتے ہوئے ہم نے وائرل ویڈیو سے متعلق معلومات کو تلاش کرنا شروع کیا۔ سرچ میں ہمیں پجھوک افغان نیوز نام کے آفیشیئل فیس بک پیج پر یہ وائرل ویڈیو ملا۔ 12 فروری 2020 کو یہاں ویڈیو کو اپ لوڈ کرتے ہوئے سات روز قبل افغانستان کے منگان کا بتاتے ہوئے لکھا گیا ہے، اردو ترجمہ، ’’ ڈالر کے گودام کی ایک منٹ طویل ویڈیو سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی ہے اور ایسا لگتا ہے کہ آج سے سات دن پہلے افغانستان کے اندر ایک مٹی کے کمرے میں ریکارڈ کیا گیا تھا۔ غیر مصدقہ اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ یہ ڈالر ایک سابق اہلکار کے تھے اور یہ سمنگان میں سکیورٹی فورسز کے حوالے کیے گئے تھے۔‘‘۔

تمام تفتیش کے بعد بھی وشواس نیوز اس بات کی آزادانہ طور پر تصدیق نہیں کر سکتا ہے کہ ویڈیو کہاں کا اور کب کا ہے لیکن یہ واضح ہے کہ یہ سال 2020 سے سوشل میڈیا پر موجود ہے اور گزشتہ ماہ طالبان کے افغانستان میں ہوئے قبضہ سے پہلے کا ہے۔

وائرل پوسٹ سے متعلق دعوی کی تصدیق کے لئے ہم نے اٹرنیشنل افیئرس صحافی، مشرق وسط معاملوں کے ماہر اور یونی ورسٹی آف وارسا کے انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل رلیشنس کے وزیٹنگ فیکلٹی سوربھ شاہی کے ساتھ رابطہ کیا اور ان کے ساتھ وائرل ویڈیو شیئر کیا۔ انہوں نے ہمیں بتایا کہ افغانستان کے پنجشیر میں کچھ ڈالرس کے ضبط ہونے کا معاملہ تو پیش آیا تھا لیکن وائرل ویڈیو میں بےشمار ڈالر ہیں۔

اب باری تھی فرضی پوسٹ کو شیئر کرنے والے فیس بک پیج سریابی وائبس کی سوشل اسکیننگ کرنے کی۔ ہم نے پایا کہ اس پیج کو 6,998  لوگ فالوو کرتے ہیں۔ علاوہ ازیں اس پیج کو 17 جنوری 2020 کو بنایا گیا ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے اپنی پڑتال میں پایا کہ یہ دعوع گمراہ کن ہے۔ بے شمار ڈالر کا یہ ویڈیو پرانا ہے، اور طالبان کے افغانستان پر ہوئے قبضہ سے پہلے کا ہے۔

  • Claim Review : افغانستان میں طالبان کے ہاتھ لگنے والا ڈالر
  • Claimed By : Saryabi vibes
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later