X

فیکٹ چیک: ہندوستان میں مدارس پر پابندی لگانے کو لے کر نہیں دیا تھا اے پی جے عبد الکلام نے کوئی بیان

وشواس نیوز نے اپنی تحقیقات میں پایا کہ اے پی جے عبدالکلام نے کبھی ایسا کوئی بیان نہیں دیا۔ یہ ایک جعلی بیان ہے ، جو اس کے نام پر وائرل ہو رہا ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: September 20, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ ایک اخبار کی کٹنگ سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے ، جس میں بھارت کے سابق صدر اے پی جے عبدالکلام کی تصویر بنائی گئی ہے اور ان کے حوالے سے ایک بیان لکھا گیا ہے ، جس میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ اے پی جے عبدالکلام نے مسلمانوں کے بارے میں کہا ہے کہ ‘مسلمان پیدائشی دہشت گرد نہیں ہیں بلکہ ان کی تربیت مدرسوں میں ہوتی ہے اور ہندوستان میں تمام مدارس پر پابندی لگانا بہت ضروری ہے۔’ جب وشواس نیوز نے اس بیان کی تحقیقات کی تو ہمیں معلوم ہوا کہ اے پی جے عبدالکلام نے کبھی ایسا کوئی بیان نہیں دیا۔ یہ ایک جعلی بیان ہے ، جو اس کے نام پر وائرل ہو رہا ہے۔

وائرل پوسٹ میں کیا ہے؟

فیس بک صارف نے اخبار کی کٹنگ کی طرح نظر آنے والے ایک تصویر کو شیئر کیا جس میں کالم کی تصویر اس کیپشن کے ساتھ بنائی گئی ہے، ’مسلمان پیدائشی دہشت گرد نہیں ہیں۔ انہیں مدارس میں قرآن پڑھایا جاتا ہے، جس کے مطابق وہ ہندو، بدھ، سکھ، عیسائی، یہودی اور دیگر غیر مسلماوں کو چن چن کر قتل کرتے ہیں۔ دہشت گردی پر قابو پانے کے لیے بھارت میں چلنے والے ہزاروں مدارس پر پابندی لگانا بہت ضروری ہے‘: ڈاکٹر اے پی جے عبدالکلام‘‘۔

پڑتال

اپنی تفتیش شروع کرنے کے لیے ، ہم نے پہلے گوگل نیوز سرچ کا استعمال کرتے ہوئے وائرل پوسٹ کے مطلوبہ الفاظ کو تلاش کرنا شروع کیا۔ ہمیں تلاش میں ایسا کوئی بیان نہیں ملا ، جو کلام کے نام پر وائرل ہو رہا ہے۔ اگر اے پی جے عبدالکلام نے ایسا کوئی متنازعہ بیان دیا ہوتا تو یہ خبروں میں ہوتا۔

تحقیقات کو مزید آگے بڑھاتے ہوئے ، ہم نے وائرل اخبار کے کلپ کو تلاش کرنا شروع کیا۔ ہمیں یہ کلپ اپنی تلاش میں کسی قابل اعتماد ویب سائٹ پر نہیں مل سکا۔

وشواس نیوز نے وائرل بیان کی تصدیق کے لیے ڈاکٹر اے پی جے عبدالکلام فاؤنڈیشن کے منیجنگ ٹرسٹی اور عبدالکلام کے نواسے سے واٹس ایپ کے ذریعے رابطہ کیا اور وائرل پوسٹ کو ان کے ساتھ شیئر کیا۔ اس نے ہمیں بتایا ، ‘یہ بیان مکمل طور پر جھوٹا ہے۔ ڈاکٹر کلام کبھی مذہب کے بارے میں اتنی بات نہیں کرتے تھے۔ یہ واضح طور پر جعلی ہے‘‘۔

اب باری تھی فیس بک کے صارف راجندر ٹھاکر کی سوشل سکیننگ کرنے کی جس نے اس جعلی پوسٹ کو شیئر کیا۔ ہم نے پایا کہ یہ صارف ، جو کہ ممبئی ، مہاراشٹر سے ہے ، پہلے ہی ایک جعلی پوسٹ شیئر کر چکا ہے۔ اور فیس بک کے 1179 دوست ہیں۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے اپنی تحقیقات میں پایا کہ اے پی جے عبدالکلام نے کبھی ایسا کوئی بیان نہیں دیا۔ یہ ایک جعلی بیان ہے ، جو اس کے نام پر وائرل ہو رہا ہے۔

  • Claim Review : مسلمان پیدائشی دہشت گرد نہیں ہیں۔ انہیں مدارس میں قرآن پڑھایا جاتا ہے، جس کے مطابق وہ ہندو، بدھ، سکھ، عیسائی، یہودی اور دیگر غیر مسلماوں کو چن چن کر قتل کرتے ہیں۔ دہشت گردی پر قابو پانے کے لیے بھارت میں چلنے والے ہزاروں مدارس پر پابندی لگانا بہت ضروری ہے
  • Claimed By : راجندر ٹھاکر
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later