X

فیکٹ چیک: بنگلہ دیش میں دکانوں میں لگی آگ کی تصاویر، فرضی فرقہ وارانہ دعوی کے ساتھ ہو رہی وائرل

وشواس نیوز نے جب اس پوسٹ کو چیک کیا تو ہمیں یہ دعویٰ گمراہ کن معلوم ہوا۔ تحقیقات کے مطابق ہندو اور مسلم دونوں دکانوں میں آگ شارٹ سرکٹ کے باعث لگی۔

  • By Vishvas News
  • Updated: August 14, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ وائرل ہو رہی ہے، جس میں کچھ دکانوں کو جلتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ فرقہ وارانہ دعوے کے ساتھ پوسٹ شیئر کرتے ہوئے صارفین دعویٰ کر رہے ہیں کہ بنگلہ دیش میں ہندوؤں کی دکانیں جلا دی گئیں۔ وشواس نیوز نے جب اس پوسٹ کو چیک کیا تو ہمیں یہ دعویٰ گمراہ کن معلوم ہوا۔ تحقیقات کے مطابق ہندو اور مسلم دونوں دکانوں میں آگ شارٹ سرکٹ کے باعث لگی تھی۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

وائرل پوسٹ کو شیئر کرتے ہوئے ایک فیس بک صارف نے لکھا، ‘بولکھلی اپازیلو کا پوپاڈیا سنگھ۔ کل رات 3 بجے اوراد نمبر 3 کدھور خیل ہائی اسکول کے قریب 5 دکانوں کو آگ لگا دی گئی۔ دکان کے مالک، رونی ڈے، ڈولن، پرمل دیو ناتھ۔ فریج سمیت دکان میں موجود 3 بکریاں، دکان کا سارا سامان جل گیا یہ کام کس نے کیا؟ یہ سب جاننے کا کیا فائدہ؟ بلکہ خبروں سے لطف اندوز ہوں اور ناشتہ کریں‘‘۔

فیکٹ چیک کے مقصد سے لکھی گئی خبر میں پوسٹ کو ہوبہو لکھا گیا ہے۔

پوسٹ کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھیں۔

پڑتال

اپنی تحقیقات شروع کرتے ہوئے، ہم نے سب سے پہلے مطلوبہ الفاظ کے ذریعے خبروں کی تلاش شروع کی۔ تلاش میں ہمیں ‘چتوڑ گرام نیوز’ کی ویب سائٹ پر ایک وائرل تصویر ملی اور 2 اگست 2022 کو شائع ہونے والی خبر کے مطابق، ‘چٹاگانگ کے بولکھلی میں زبردست آگ لگی ہے۔ آگ منگل (2 اگست) کی صبح تقریباً 4 بجے کدھورکھلی گورنمنٹ ہائی اسکول کے قریب لگی۔ پانچ دکانیں اور تین بکریاں جل کر راکھ ہو گئیں۔ بولکھلی فائر سروس کے لیڈر نے بتایا کہ آگ منگل (2 اگست) کی صبح تقریباً 4 بجے برقی شارٹ سرکٹ کی وجہ سے لگی۔ پوری خبر یہاں پڑھیں۔

اسی کیس سے متعلق خبر ‘جاگو نیوز 24’ نامی ویب سائٹ پر بھی دیکھی گئی اور وائرل تصویر یہاں بھی دیکھی جا سکتی ہے۔ خبر میں دی گئی معلومات کے مطابق، ‘اس آگ میں پانچ دکانیں اور تین بکریاں جل کر راکھ ہو گئیں۔ رانی رائے کی کریانہ کی دکان میں آگ لگ گئی، محمد کریم کی کولنگ کارنر، پرمل ناتھ کی سبزی کی دکان، ڈولن شیل کا سیلون اور محمد محرم کی سبزی کی دکان جل گئی۔ مکمل خبر یہاں پڑھیں۔

ہمیں ’سی ٹی خبر‘ نامی بنگلہ دیشی ویب سائٹ پر بھی اس معاملے سے متعلق خبریں ملی ہیں۔ یہاں دی گئی معلومات کے مطابق، ‘حادثے میں محمد محرم علی، محمد رونی، محمد کریم، پرمل اور ڈولن کی دکانیں جلی ہیں۔

تصدیق کے لیے ہم بنگلہ دیش میں مقیم صحافی متھن صادق رحمٰن سے رابطہ کیا اور ان کے ساتھ وائرل پوسٹ شیئر کی۔ انہوں نے ہمیں تصدیق کی اور بتایا کہ صرف ہندوؤں کی دکانوں کو جلانے کا دعویٰ جھوٹا ہے۔ متاثرین میں مسلمان دکاندار بھی شامل ہیں۔اب تک کی تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ آگ شارٹ سرکٹ کے باعث لگی۔

گمراہ کن خبریں شیئر کرنے والے فیس بک صارف شاون تھلکدر کی سوشل اسکیننگ میں ہمیں معلوم ہوا کہ صارف بنگلہ دیش کا رہائشی ہے اور اس کے بعد 1131 لوگ ہیں۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے جب اس پوسٹ کو چیک کیا تو ہمیں یہ دعویٰ گمراہ کن معلوم ہوا۔ تحقیقات کے مطابق ہندو اور مسلم دونوں دکانوں میں آگ شارٹ سرکٹ کے باعث لگی۔

  • Claim Review : بنگلہ دیش میں ہندوؤں کی دکانیں جلا دی گئیں
  • Claimed By : شاون تھلکدر
  • Fact Check : گمراہ کن
گمراہ کن
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later