X

فیکٹ چیک: برقع پہنے ہوئے شخص کا جامعہ سے نہیں ہے کوئی لینا دینا، تصویر مصر کی ہے

  • By Vishvas News
  • Updated: December 18, 2019

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر آج کل ایک تصویر وائرل ہو رہی ہے جس میں برقع پہنے ہوئے ایک شخص کو دیکھا جا سکتا ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ جامعہ یونی ورسٹی میں مظاہرہ کرتی ایک لڑکی اصل میں لڑکا ہے اور یہ تصویر اسی کی ہے۔ ہم نے اپنی پڑتال میں پایا کہ یہ دعویٰ غلط ہے۔ تصویر میں موجود شخص ایک بچہ چور ہے جسے مصر کی دار الحومت قاہرہ میں پکڑا گیا تھا۔ اس کا جامعہ میں ہو رہے احتجاجی مظاہرے سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔

دعویٰ

وائرل پوسٹ میں تین تصاویر ہیں۔ پہلی تصویر میں برقع پہنے ہوئے ایک شخص کو دیکھا جا سکتا ہے۔ دوسری اور تیسری میں ایک حجاب میں احتجاج کرتے ہوئے ایک لڑکی نظر آرہی ہے۔ پوسٹ کے ساتھ کیپشن میں لکھا ہے، ’’جو سلمی بن کر جامعہ دہلی میں فساد کروا رہی تھی وہ اندر سے سلیم چچا نکلے‘‘۔

فیکٹ چیک

اس پوسٹ کی پڑتال کرنے کے لئے ہم نے سب سے پہلے اس تصویر کا اسکرین شاٹ لیا اور اسے گوگل رورس امیج پر سرچ کیا۔ ہمارے سامنے پہلے ہی پیج پر کئی سارے لنک نکل کر آئے۔ سب سے پرانے لنک 2017 کے تھے۔ ماراکیچ7 ڈاٹ کام ویب سائٹ پر 26۔08۔2017 کو شائع خبر کے مطابق، یہ ایک بچہ چور تھا جسے قائرہ فسیٹول سٹی کے سامنے سے لوگوں نے بچہ چوری کے شبہ میں پکڑتا تھا۔ ہم نے مزید تصدیق کے لئے اس ویب سائٹ کے ایڈیٹر کو میل لکھا ہے۔ ان کا جواب آتے ہی کاپی کو اپ ڈیٹ کر دیا جائےگا۔

ہمیں یہ خبر ’سے7 ایٹ ڈاٹ اناہار ڈاٹ کام‘ اور ’یوم7ڈاٹ کام‘ پر بھی ملی۔
say7at.annahar.com اور https://www.youm7.com/

اب ہمیں پتہ لگانا تھا کہ پوسٹ کی دیگر 2 تصاویر میں موجود لڑکی کون ہے۔ ہم نے انٹرنیٹ پر تفتیش کی تو معلوم ہوا کہ یہ لڑکی عائشہ رینا ہے اور وہ جامعہ یونی ورسٹی میں ہسٹری کی پڑھائی کر رہی ہیں۔ اس کی تصویر کو مشہور صحافی برکھا دت نے بھی اپنے ٹویٹر ہینڈل پر شیئر کیا تھا۔

اب ہم نے مزید تصدیق کے لئےعائشہ رینا سے فون پر رابطہ کیا۔ انہوں نے ہمیں بتایا کہ وہ جامعہ میں ہسٹری کی طالب علم ہیں اور شہریت ترمیمی ایکٹ کے خلاف ہو رہے مظاہرے میں انہوں نے حصہ لیا تھا اور احتجاج کرتی نظر آرہی لڑکی وہ ہی ہیں۔ جب ان سے سوال کیا گیا کہ ان کا اس طرح کی افواہوں پر کیا کہنا ہے تو انہوں نے کہا، ’’یہ معاشرہ خود مختار خواتین کو اپنانا نہیں جانتا۔ ایسے پوسٹ نہ صرف خواتین کو نیچا دکھاتے ہیں بلکہ معاشرے کے لئے ایک آئنا بھی ہیں‘‘۔

اب باری تھی اس پوسٹ کو فرضی حوالے کے ساتھ وائرل کرنے والے فیس بک صارف ارون بھارتی کی سوشل اسکیننگ کرنے کی۔ ہم نے پایا کہ اس پروفائل کی جانب سے ایک مخصوص برادی کے خلاف پوسٹ شیئر کی جاتی ہیں۔

نتیجہ: ہم نے اپنی پڑتال میں پایا کہ وائرل ہو رہی پوسٹ غلط ہے۔ وائرل پوسٹ میں نظر آرہے شخص کا جامعہ مظاہرہ سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ یہ مصر کے قائرہ کی تصویر ہے اور یہ شخص بچہ چوری کے جرم میں پکڑا گیا تھا۔ پوسٹ میں نظر آرہی لڑکی عائشہ رینا ہے جو جامعہ ملیہ اسلامیہ میں ہرسٹری کی طالبہ ہیں۔ ان دونوں تصاویر کا آپس میں کوئی لینا دینا نہیں ہے۔

  • Claim Review : जो सलमा बनकर जामिया दिल्ली में दंगे करवा रही थी वो अंदर से सलीम चचा निकले ।
  • Claimed By : FB User- Arun Bhati
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
    فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Post saved! You can read it later