X

فیکٹ چیک: دھونی کے مذہب اسلام اپنانے کا دعوی فرضی، ایڈیٹڈ تصاویر کی جا رہی ہیں وائرل

وشواس نیوز کی جانچ میں یہ دعویٰ جھوٹا نکلا۔ دھونی کی یہ تصاویر ایڈیٹنگ ٹولز کی مدد سے تیار کی گئی ہیں۔ سوشل میڈیا صارفین دھونی کی ایڈیٹ شدہ تصاویر کو غلط دعوے کے ساتھ شیئر کر رہے ہیں۔

  • By Vishvas News
  • Updated: July 31, 2022

وشواس نیوز (نئی دہلی)۔ بھارتی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان مہندر سنگھ دھونی کی دو تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہیں۔ سوشل میڈیا صارفین دھونی کی اسلامی ٹوپی پہنے تصاویر وائرل کر رہے ہیں جس میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ سابق کپتان نے اسلام قبول کر لیا ہے۔ وشواس نیوز کی جانچ میں یہ دعویٰ جھوٹا نکلا۔ دھونی کی یہ تصاویر ایڈیٹنگ ٹولز کی مدد سے تیار کی گئی ہیں۔ سوشل میڈیا صارفین دھونی کی ایڈیٹ شدہ تصاویر کو غلط دعوے کے ساتھ شیئر کر رہے ہیں۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

وشواس نیوز کو حقائق کی جانچ کے لیے اپنے واٹس ایپ چیٹ بوٹ (+91 95992 99372) پر بھی یہ دعویٰ موصول ہوا ہے۔ دھونی کے اس وائرل دعوے کو ایک صارف نے ہمارے ساتھ شیئر کیا ہے اور اس کی حقیقت جاننی چاہی ہے۔ ہمیں یہ وائرل پوسٹ فیس بک پر مطلوبہ الفاظ کے ساتھ تلاش کرنے پر بھی ملی۔ فیس بک پیج نے اس تصویر کو شیئر کرتے ہوئے لکھا، “ماشااللہ! سبحان اللہ! 3 بار آئی سی سی ٹرافی جیتنے والے، اب تک کے بہترین بھارتی کپتان، انشاء اللہ ایم ایس دھونی نے اسلام قبول کر لیا ہے۔ اس نے اپنا نام بدل کر ایم ڈی دانش رکھ لیا ہے۔

اس پوسٹ کو یہاں پیش کیا گیا ہے جیسا کہ یہ ہے۔ اس پوسٹ کا آرکائیو ورژن یہاں کلک کر کے دیکھا جا سکتا ہے۔

پڑتال

وائرل دعوے کے ساتھ دو تصویریں شیئر کی جا رہی ہیں۔ پہلی تصویر میں دھونی نے سرخ رنگ کی ٹی شرٹ پہنی ہوئی ہے جبکہ دوسری تصویر میں وہ پیلے رنگ کی ٹی شرٹ پہنے ہوئے ہیں۔ دونوں تصویروں میں سر پر ٹوپی پہن رکھی ہے۔ تحقیقات کے مقصد کے لیے ہم نے وائرل ہونے والی دونوں تصاویر کو الگ الگ جانچنے کا فیصلہ کیا۔

پہلی تصویر

لال ٹی شرٹ میں دھونی کی پہلی تصویر دیکھنے کے لیے ہم نے گوگل ریورس امیج کا استعمال کیا۔ ہمیں یہ تصویر انڈیا ٹی وی نیوز پر 2010 کی ایک خبر میں ملی۔ اس تصویر میں وہ اپنی اہلیہ ساکشی دھونی کے ساتھ تھے۔ لیکن اس تصویر میں انہوں نے سر پر ٹوپی نہیں پہن رکھی تھی۔

ہمیں این ڈی ٹی وی کی ایک خبر میں ایک دوسرے زاویے سے بھی یہی تصویر ملی ہے۔ اس تصویر میں بھی دھونی نے ٹوپی نہیں پہنی ہوئی تھی۔

دوسری تصویر

دھونی کی پیلی ٹی شرٹ کی تصویر کو چیک کرنے کے لیے ہم نے گوگل ریورس امیج کا بھی استعمال کیا۔ ہمیں یہ تصویر دا نیوزمینٹ پر 2020 کی خبروں میں ملی۔ لیکن اس تصویر میں انہوں نے سر پر ٹوپی نہیں پہن رکھی تھی۔

اب ہم نے مطلوبہ الفاظ کی تلاش کا سہارا لیا اور پتہ چلا کہ کیا دھونی نے اسلام قبول کر لیا ہے؟ ہمیں ایسی کوئی خبر کسی مستند نیوز ویب سائٹ پر نہیں مل سکی۔

ہم نے جاگرن ڈاٹ کام کے اسپورٹس رپورٹر وپلاو کمار کے ساتھ دھونی کی وائرل تصاویر بھی شیئر کیں۔ انہوں نے ان تصاویر کے ساتھ کیے جانے والے دعوے کی بھی تردید کی اور ہمیں بتایا کہ یہ تصاویر ایڈیٹ کی گئی ہیں اور دھونی کے مذہب تبدیل ہونے کی کوئی خبر نہیں ہے۔

دھونی کا تعلق رانچی سے ہے۔ اسی لیے ہم نے اس سلسلے میں تصدیق کے لیے دینک جاگرن کے رانچی کے ایڈیٹر پردیپ شکلا سے بھی رابطہ کیا۔ انہوں نے اس دعوے کو بھی جعلی قرار دیا۔

وائرل دعویٰ کو جس فیس بک پیج نے شیئر کیا ہے اس پیج کو 4000 سے زیادہ لوگوں نے لائیک کیا ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز کی جانچ میں یہ دعویٰ جھوٹا نکلا۔ دھونی کی یہ تصاویر ایڈیٹنگ ٹولز کی مدد سے تیار کی گئی ہیں۔ سوشل میڈیا صارفین دھونی کی ایڈیٹ شدہ تصاویر کو غلط دعوے کے ساتھ شیئر کر رہے ہیں۔

  • Claim Review : دھونی نے اسلام قبول کر لیا ہے
  • Claimed By : Cricket is my drug, Mufa bhai is my dealer
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later