X

فیکٹ چیک: پونے کی ٹرین میں ہوئے متنازعہ میں ہوئی تھی نوجوان کی موت، نہیں تھا کوئی فرقہ وارانہ اینگل

  • By Vishvas News
  • Updated: February 25, 2020

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر آج کل ایک میسج وائرل ہو رہا ہے، جس میں لکھا ہے، ’’26 سالہ ساگر اپنی بیوی اور نوزائیدہ بچے کے ساتھ کے ساتھ ٹرین میں پونے جارہا تھا۔ انہوں نے ایک برقعہ پوش خاتون سے عام بوگی میں اپنی بیوی کے لئے جگہ بنانے کی درخواست کی، اس پر 12 کنبہ کے افراد (7 خواتین) نے اسے اپنی بیوی اور نوزائیدہ کے سامنے موت کے گھاٹ اتار دیا۔ کوئی میڈیا رپورٹ نہیں‘‘۔ وشواس نیوز کی پڑتال میں یہ میسج غلط ثابت ہوا۔ اس معاملہ میں ملوث تمام افراد ایک ہی مذہب اور برادری کے تھے۔ اس معاملہ میں کوئی فرقہ وارانہ اینگل نہیں تھا۔

کیا ہو رہا ہے وائرل؟

فیس بک صارف ’ونیتھا جے‘ نے ایک پوسٹ شیئر کرتے ہوئے لکھا ہے،’’26 سالہ ساگر اپنی بیوی اور نوزائیدہ بچے کے ساتھ کے ساتھ ٹرین میں پونے جارہا تھا۔ انہوں نے ایک برقعہ پوش خاتون سے عام بوگی میں اپنی بیوی کے لئے جگہ بنانے کی درخواست کی، اس پر 12 کنبہ کے افراد (7 خواتین) نے اسے اپنی بیوی اور نوزائیدہ کے سامنے موت کے گھاٹ اتار دیا۔ کوئی میڈیا رپورٹ نہیں‘‘۔

پڑتال

اس میسج میں دی گئی تفصیل کو جب ہم نے گوگل کی ورڈ میں سرچ کیا تو ہمارے سامنے دینک جاگرن کے ساتھی اخبار نئی دنیا پر 15 فروری کو شائع ہوئی ایک خبر آئی۔ خبر میں اس پورے معاملہ کی تفصیل تھی۔ خبر کے مطابق، ’’ٹرین میں ہوئی معمولی کہاسنی کے درمیان متنازعہ اتنا پڑھ گیا کہ ایک درجن مسافرین نے نوجوان کو اتنا مارا کہ اس کی موت ہو گئی۔ اس مار پیٹ میں 7 خواتین بھی شامل تھیں۔ معاملہ ممبئی-لاتور- بیدر ایکسپریس میں جمعرات (13 فروری) کو ہوا۔ متنازعہ کی شروعات سیٹ کو لے کر ہوئی تھی۔ دیکھتے ہی دیکھتے معمولی بحث بڑے متنازعہ میں تبدیل ہو گئی، جس کے نتیجہ میں 26 سالہ نوجوان کی موت ہوئی۔ مہلک نوجوان کی بیوی جیوتی نے اس کی شکایت پولیس میں کی‘‘۔ اس خبر میں کہا گیا کہ ’’ریلوے پولیس نے اس معاملہ میں 12 لوگوں کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔ اس میں 7 خواتین بھی شامل ہیں‘‘۔ خبر میں کہیں بھی ان 12 لوگوں سے متعلق معلومات نہیں ہے۔

اس کے بعد ہمیں مہاراشٹر ٹائمس پر 15 فروری کو شائع ہوئی ایک خبر ملی جس میں حراست میں لئے گئے لوگوں کی تفصیل تھی۔ خبر کے مطابق، ان لوگوں کے نام تارہ بائی ماروتی پوار، جمونا دتا کالے، تائی ہنومنت پوار، کلاوتی دھوڑی با چہوان، گونگو بائی نام دیو کاٹھے، روپاکی سوم ناتھ چہوان، نکیتا اشوک کالے، ہنومنت گنپت پوار، اشوک آپا کالے، سونو اپا، گنیش شواجی چہوان۔

اس موضوع پر مزید تصدیق کے لئے ہم نے راج کیئے ریلوے پولیس، پونے کے سینئر پولیس سپرنٹینڈنٹ ایس آر گوڈے سے بات کی۔ انہوں نے کہا، ’’میں اس بات کی تصدیق کر سکتا ہوں کہ اس معاملہ میں کوئی فرقہ وارانہ اینگل نہیں تھا۔ بحث کے درمیان ایک شخص نے ساگر کے سر پر لاٹھی سے حملہ کیا، جس کے سبب اس کی موت ہو گئی۔ مسافر کی موت میں شامل بارہ لوگوں میں سے ایک نابالغ تھا۔ معاملہ میں ملوث سات خواتین اور چار مردوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔ متاثر اور ملزمین ایک ہی مذہب کے تھے‘‘۔

اب باری تھی اس پوسٹ کو فرضی دعویٰ کے ساتھ شیئر کرنے والی فیس بک صارف ونیتھا جے کی سوشل اسکیننگ کرنے کی۔ ہم نے پایا کہ اس پروفائل سے ایک مخصوص برادری کے خلاف پوسٹ شیئر کی جاتی ہیں۔

نتیجہ: وشواس ٹیم کی پڑتال میں یہ میسج غلط ثابت ہوا۔ اس معاملہ میں متاثر اور ملزمین اور مذہب کے تھے۔ اس معاملہ میں کوئی فرقہ وارانہ اینگل نہیں تھا۔

  • Claim Review : 26 yr old sagar was traveling in Train from Pune with his wife & new born girl. He requested a Burkha clad woman to make space for his wife in general bogey,her 12 family members (7 women)LYNCHED him to death in front of his wife & new born
  • Claimed By : Fb User- Vanitha J
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
    فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Post saved! You can read it later