X

فیکٹ چیک: سپریم کورٹ نے حکم نہیں دیا ہے کہ سلم مرد ہندو خاتون سے شادی نہیں کر سکتا، وائرل پوسٹ فرضی ہے

  • By Vishvas News
  • Updated: September 5, 2020

نئی دہلی (وشواس ٹیم)۔ سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ وائرل ہو رہی ہے، جس میں یہ دعوی کیا گیا ہے کہ سپریم کورٹ نے حکم دیا ہے کہ ایک مسلمان مرد ہندو عورت سے شادی نہیں کر سکے گا۔ وشواس نیوز کو پتہ چلا کہ وائرل پوسٹ فرضی تھی۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک صارف ’جئےکرن فرشوال‘ نے ایک پوسٹ شیئر کی جس پر لکھا تھا، ’’سپریم کورٹ کا حکم، مسلم مرد نہیں کر سکےگا ہندو خاتون سے شادی، نہیں تو ہوگی بڑی کاروائی، صحیح فیصلہ جے سری رام‘‘۔

پڑتال

وائرل پوسٹ میں کئے جانے والے دعوے کی تحقیقات کے لئے، ہم نے پہلے مطلوبہ الفاظ کی مدد سے انٹرنیٹ تلاش کیا، لیکن ہمیں کوئی میڈیا رپورٹس نہیں ملی جو وائرل پوسٹ میں اس دعوے کی تصدیق کرتی ہو۔ اگر عدالت عظمیٰ نے ایسا فیصلہ دیا ہوتا تو یہ تاریخی فیصلہ ہوتا اور یہ میڈیا میں سرخیاں بن جاتا۔

ہم نے سپریم کورٹ کی ویب سائٹ پر بھی دیکھا، لیکن وہاں بھی ہمیں حالیہ فیصلہ میں ایسے کسی فیصلہ کی کاپی نہیں ملی۔

وشواس نیوز نے سپریم کورٹ کی وکیل سنیہا سنگھ سے رابطہ کیا۔ سنگھ نے بتایا کہ ان کے پاس سپریم کورٹ میں ہونے والے فیصلوں کا نوٹیفیکشن روز آتا ہے، لیکن اس طرح کا کوئی فیصلہ کورٹ نے نہیں سنایا ہے۔ وائرل پوسٹ پوری طرح سے فرضی ہے۔

فرضی پوسٹ کو شیئر رکنے والے فیس بک صارف جئے کرن فرش وال کی سوشل اسکیننگ میں ہم نے پایا کہ اس صارف کو 119 صارفین فالوو کرتے ہیں۔

نتیجہ: سپریم کورٹ نے نہیں کہا کہ مسلم مرد ہندو خاتون سے شادی نہیں کر سکتا، وائرل پوسٹ فرضی ہے۔

  • Claim Review : دعوی کیا گیا ہے کہ سپریم کورٹ نے حکم دیا ہے کہ ایک مسلمان مرد ہندو عورت سے شادی نہیں کر سکے گا۔
  • Claimed By : Jaikaran Farshwal
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
    فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Post saved! You can read it later