X

فیکٹ چیک: افغانستان میں بامیان کے بدھ کے نام پر وائرل تصویر ممبئی کی کنہیری غار کی ہے

افغانستان میں طالبان حکومت کے ذریعہ بحال کئے جا رہے بامیان کے بدھ کے نام پر وائرل ہو رہی تصویر ممبئی، مہاراشٹرا میں کہنری غار کی ہے۔ افغانستان کی طالبات حکومت کے ذریعہ بامیان کے بدھ کو دوربارہ تعمیر نہیں کیا ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: August 31, 2022

وشواس نیوز (نئی دہلی): سوشل میڈیا پر ایک تصویر وائرل ہو رہی ہے، جس میں بدھا کا ایک بڑا مجسمہ دیکھا جا سکتا ہے۔ پوسٹ میں کہا جا رہا ہے کہ افغانستان کی طالبان حکومت نے ایک سال میں بامیان کا بدھا بنا دیا اور یہ وہاں کی تصویر ہے۔ بامیان کے بدھ 6ویں صدی عیسوی میں وسطی افغانستان کی وادی بامیان میں ایک چٹان سے تراشے گئے تھے اور 1400 سال تک تقریباً 180 فٹ بلند رہے۔ طالبان نے اسے 2001 میں بھاری دھماکہ خیز مواد سے اڑا دیا۔ پوسٹ میں دعویٰ کیا گیا کہ طالبان حکومت نے اب اس مجسمے کو دوبارہ تعمیر کیا ہے۔ وشواس نیوز نے اپنی جانچ میں پتہ چلا ہے کہ پوسٹ میں مہاتما بدھ کی وائرل تصویر ممبئی کے کنہیری غاروں کی ہے نہ کہ افغانستان کی وادی بامیان کی ہے۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

ٹوئٹر صارف مویانہ فیاض اوف کانی (آرکائیو) نے دو تصاویر شیئر کیں اور لکھا، ’’افغانستان کی طالبان حکومت نے ایک سال کے اندر بامیان کے بدھا کو بحال کر دیا ہے۔ نریندر مودی حکومت بابری مسجد کی تزئین و آرائش کب کرنے جا رہی ہے؟

پوسٹ کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھیں۔

پڑتال

وشواس نیوز نے گوگل ریورس امیج سرچ کے ساتھ جانچ شروع کی۔

پہلی تصویر دراصل بامیان کے بدھا کی تھی۔

ہمیں افغانستان کے بامیان بدھوں کی تاریخ پر ایک مضمون ملا۔ مضمون میں کہا گیا ہے: دو بڑے بامیان بدھ ایک ہزار سال سے زیادہ عرصے تک افغانستان میں سب سے اہم آثار قدیمہ کے مقام کے طور پر کھڑے رہے۔ وہ دنیا کا سب سے بڑا کھڑا بدھ تھا۔ پھر 2001 کے موسم بہار میں چند ہی دنوں میں اسے تباہ کر دیا گیا۔

طالبان کی اس تباہی پر اقوام متحدہ نے بھی تبصرہ کیا۔

ہمیں گیٹی امیجز کی ویب سائٹ پر بھی تصاویر ملیں۔

اس کے بعد ہم نے دوسری تصویر پر گوگل ریورس امیج سرچ کیا۔

ہمیں یہ تصویر ایک ویب سائٹ پر ملی جس میں کنہیری غاروں اور سنجے گاندھی نیشنل پارک کی تصاویر تھیں۔

مضمون 10 اپریل 2015 کو پوسٹ کیا گیا تھا۔

ہمیں یہ تصویر سنجے گاندھی نیشنل پارک کے وکی پیڈیا پیج پر بھی ملی، جس میں کہا گیا تھا کہ بدھا کا یہ 7 میٹر اونچا مجسمہ کنہیری غار کے دروازے پر ہے۔

ہمیں یہ تصویر شٹراسکاٹ کی ویب سائٹ پر بھی ملی۔

تو واضح ہوا کہ دوسری تصویر ممبئی کے کنہیری غاروں کی ہے۔

پھر ہم نے چیک کیا کہ آیا افغانستان میں طالبان حکومت نے بامیان میں بدھا کے مجسمے کو دوبارہ تعمیر کیا ہے۔ ہمیں ایسی کوئی میڈیا رپورٹ نہیں مل سکی۔

پھر ہم نے انسٹاگرام پر لوکیشن ٹیگ کے ذریعے چیک کیا کہ آیا لوگوں نے بدھا کے اس مجسمے کو کنہیری غاروں کے طور پر پوسٹ کیا تھا۔

ہمیں انسٹاگرام صارفین کی ایک بدھ مجسمے کے سامنے تصویریں لگاتے ہوئے ملیں، جہاں کہا جاتا ہے کہ یہ کنہیری غاروں کی ہے۔

تحقیقات کے اگلے مرحلے میں، ہمارے ساتھ ممبئی میں مقیم ایک سینئر صحافی میور پاریکھ سے رابطہ کیا جو کنہیری غاروں کے بارے میں اکثر لکھتے رہتے ہیں۔ انہوں نے تصدیق کی کہ یہ تصویر ممبئی کے کنہیری غاروں کی ہے۔

ممبئی کے ایک اور بصری آرٹ کے طالب علم ناگیش کناڈے نے بھی تصدیق کی کہ وائرل ہونے والی تصویر ممبئی کے کنہیری غاروں کی ہے۔

تحقیقات کے آخری مرحلے میں وشواس نیوز نے وائرل تصویر پوسٹ کرنے والے ٹوئٹر صارف کی سوشل اسکیننگ کی۔ ہمیں معلوم ہوا کہ مولانا فیاض کانی نے نومبر 2020 میں ٹوئٹر جوائن کیا تھا اور انہیں 5,022 لوگ فالو کرتے ہیں جبکہ وہ کسی کو فالو نہیں کرتے۔

نتیجہ: افغانستان میں طالبان حکومت کے ذریعہ بحال کئے جا رہے بامیان کے بدھ کے نام پر وائرل ہو رہی تصویر ممبئی، مہاراشٹرا میں کہنری غار کی ہے۔ افغانستان کی طالبات حکومت کے ذریعہ بامیان کے بدھ کو دوربارہ تعمیر نہیں کیا ہے۔

  • Claim Review : افغانستان کی طالبان حکومت نے ایک سال کے اندر بامیان کے بدھا کو بحال کر دیا ہے۔
  • Claimed By : مولانا فیاض
  • Fact Check : گمراہ کن
گمراہ کن
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later