X

فیکٹ چیک: پیشاور دھماکہ کے نام پر وائرل ہوئی تصویر پرانی ہے

وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ پتہ چلا کہ پشاور بم دھماکے کے نام سے جو تصویر وائرل ہو رہی ہے وہ بہت پرانی ہے۔ لوگ 2004 میں مسجد میں ہونے والے بم دھماکے کی اس تصویر کو پشاور میں حال میں ہوئے دھماکہ کے نام سے وائرل کر رہے ہیں۔ وشواس نیوز کی جانچ میں وائرل پوسٹ گمراہ کن ثابت ہوئی۔

  • By Vishvas News
  • Updated: March 13, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ مارچ میں پاکستان کے شہر پشاور میں شیعہ مسجد میں نماز جمعہ کے دوران بم دھماکہ کے بعد سے پرانی تصاویر اور ویڈیوز سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہیں۔ اب ایک تصویر گمراہ کن انداز میں وائرل کی جا رہی ہے جس میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ یہ تصویر پشاور میں ہونے والے بم دھماکے کی ہے۔ وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ پتہ چلا کہ پشاور بم دھماکے کے نام سے جو تصویر وائرل ہو رہی ہے وہ بہت پرانی ہے۔ لوگ 2004 میں مسجد میں ہونے والے بم دھماکے کی اس تصویر کو پشاور میں حال میں ہوئے دھماکہ کے نام سے وائرل کر رہے ہیں۔ وشواس نیوز کی جانچ میں وائرل پوسٹ گمراہ کن ثابت ہوئی۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک صارف محمد بن نعیم نے 4 مارچ کو ایک تصویر پوسٹ کی جس میں دعویٰ کیا گیا: ‘پاکستان کے شہر پشاور کی مسجد میں نماز جمعہ کے دوران ہونے والے بم دھماکے میں کم از کم 30 افراد ہلاک اور 50 سے زیادہ زخمی ہو گئے۔’

فیس بک پوسٹ کا مواد ویسا ہی ہے جیسا کہ یہاں لکھا گیا ہے۔ اس کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھیں۔ سوشل میڈیا پر کئی دیگر صارفین نے اسے اسی طرح کے اور اسی طرح کے دعووں کے ساتھ شیئر کیا ہے۔

پڑتال

وشواس نیوز نے گوگل ریورس امیج ٹول کے ساتھ جانچ شروع کی۔ سب سے پہلے اس ٹول پر وائرل تصویر اپ لوڈ کرکے تلاش شروع کی۔ ہمیں وائرل تصویر نیوز کی ویب سائٹ پر ملی۔ اس تصویر کا استعمال کرتے ہوئے 7 مئی 2004 کو اپ لوڈ کی گئی ایک خبر میں بتایا گیا کہ کراچی، پاکستان میں ایک مسجد میں ہونے والے بم دھماکے میں 14 افراد ہلاک اور 200 سے زائد زخمی ہوئے۔ مکمل خبر یہاں پڑھیں۔

گوگل سرچ کے دوران ہمیں جاگرن ڈاٹ کام پر ایک خبر ملی۔ اس میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کے شہر پشاور میں ایک شیعہ مسجد میں نماز جمعہ کے دوران ہونے والے خوفناک خودکش بم دھماکے میں 57 افراد ہلاک اور 200 سے زائد زخمی ہوئے۔ وزیراعظم عمران خان نے واقعے کی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے۔ مکمل خبر یہاں پڑھیں۔

تحقیقات جاری رکھتے ہوئے، وشواس نیوز نے پاکستان کے 92 نیوز کے صحافی عارف محمود سے رابطہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ وائرل ہونے والی تصویر پرانی ہے۔ اس کا تعلق پشاور کی مسجد میں ہونے والے دھماکے سے نہیں ہے۔

تحقیقات کے اختتام پر وشواس نیوز نے پرانی تصویر کو موجودہ دھماکے سے جوڑنے والے وائرل فیس بک صارف کی سوشل اسکیننگ کی۔ معلوم ہوا کہ فیس بک صارف محمد بن نعیم بنگلہ دیش کے شہر ڈھاکہ میں رہتے ہیں۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ پتہ چلا کہ پشاور بم دھماکے کے نام سے جو تصویر وائرل ہو رہی ہے وہ بہت پرانی ہے۔ لوگ 2004 میں مسجد میں ہونے والے بم دھماکے کی اس تصویر کو پشاور میں حال میں ہوئے دھماکہ کے نام سے وائرل کر رہے ہیں۔ وشواس نیوز کی جانچ میں وائرل پوسٹ گمراہ کن ثابت ہوئی۔

  • Claim Review : پاکستان کے شہر پشاور کی مسجد میں نماز جمعہ کے دوران ہونے والے بم دھماکے میں کم از کم 30 افراد ہلاک اور 50 سے زیادہ زخمی ہو گئے
  • Claimed By : محمد بن نعیم
  • Fact Check : گمراہ کن
گمراہ کن
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later