X

فیکٹ چیک: اعظم گڑھ کے فاطمہ گرلز انٹر کالج کی تصویر کیرالہ کی بتا کر وائرل

وشواس نیوز نے اپنی پڑتال میں پایا کہ یہ تصویر کیرالہ کی نہیں بلکہ اتر پردیش کے اعظم گڑھ میں واقع فاطمہ گرلز انٹر کالج کی ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: June 3, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی تصویر میں کئی لڑکیوں کو برقعہ پہنے علیحدہ لائنوں میں کھڑے دیکھا جا سکتا ہے۔ تصویر کو اس دعوے کے ساتھ شیئر کیا جا رہا ہے کہ “یہ تصویر سعودی عرب کے کسی اسلامی ملک کی نہیں ہے، بلکہ کیرالہ میں گرلز انجینئرنگ ڈگری کالج کی ہے”۔ وائرل دعویٰ وشواس نیوز کی تحقیقات میں جھوٹا نکلا۔ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی یہ تصویر کیرالہ کی نہیں بلکہ اتر پردیش کے اعظم گڑھ میں واقع فاطمہ گرلز انٹر کالج کی ہے۔

وائرل پوسٹ میں کیا ہے؟

فیس بک صارف فردوش عالم نے یہ تصویر 18 مئی کو تصویر شیئر کرتے ہوئے لکھا، “یہ تصویر سعودی کسی اسلامی ملک کی نہیں ہے ، بلکہ بھارت کے کیرالہ میں لڑکیوں کے انجینئرنگ ڈگری کالج کی ہے ، جہاں خواتین تعلیم کے ساتھ ساتھ اپنی دنیا کو سنوار رہے ہیں‘۔

اس پوسٹ کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھا جا سکتا ہے۔

پڑتال

ہم نے وائرل تصویر کی حقیقت جاننے کے لیے گوگل ریورس امیج کا استعمال کیا۔ اس دوران، ہمیں 12 نومبر 2017 کو پرو کیرالہ ڈاٹ کام کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والے وائرل دعوے سے متعلق ایک رپورٹ ملی۔ رپورٹ میں دی گئی معلومات کے مطابق ، وائرل تصویر اعظم گڑھ ضلع کے داؤد پور گاؤں میں فاطمہ گرلز انٹر کالج کی صبح اسمبلی کے دوران لی گئی تھی۔

موصولہ معلومات کی بنیاد پر ، ہم نے کچھ مطلوبہ الفاظ کے ذریعے گوگل پر سرچ کیا۔ اس دوران ہمیں 13 نومبر 2017 کو “فاطمہ گرلز کالج اینڈ سکولز” کے فیس بک پیج پر وائرل دعوے سے متعلق ایک پوسٹ ملی۔ ایک فیس بک پوسٹ نے اخبار کی رپورٹ کا ایک سکرین شاٹ شیئر کیا ، جس کا عنوان تھا – “صبح کی نماز @ کالج”۔

اسی طرح کی رپورٹ اسی تصویر کے ساتھ کئی دوسری ویب سائٹس پر شائع کی گئی تھی ، جو کہ بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ یے اعظم گڑھ کے فاطمہ گرلز انٹر کالج کی تصویر ہے۔

اس سے پہلے بھی یہ تصویر اسی طرح کے دعووں کے ساتھ وائرل ہو چکی ہے۔ اس وقت وشواس نیوز نے اس کی تحقیقات کی تھی۔ آپ ہماری سابقہ ​​تفتیش یہاں پڑھ سکتے ہیں۔

وائرل تصویر کے بارے میں مزید جاننے کے لیے ہم نے فاطمہ گرلز کالج کے سیکرٹری آصف داؤدی سے رابطہ کیا۔ اس نے ہمیں بتایا کہ یہ تصویر صرف اس کے کالج کی ہے۔ انہوں نے مزید کہا ، یہ تصویر 2017 میں صبح کی اسمبلی کے دوران لی گئی تھی۔ یہ تصویر ماضی میں کئی بار جھوٹے دعووں کے ساتھ وائرل ہو چکی ہے۔

جس پیج نے وائرل تصویر کو گمراہ کن دعوے کے ساتھ شیئر کیا ہے اس کے فیس بک پر ایک ہزار سے زیادہ لوگ فالورس ہیں۔ فیس بک پر یہ پیج 19 مارچ 2020 کو بنایا گیا تھا۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے اپنی پڑتال میں پایا کہ یہ تصویر کیرالہ کی نہیں بلکہ اتر پردیش کے اعظم گڑھ میں واقع فاطمہ گرلز انٹر کالج کی ہے۔

  • Claim Review : یہ تصویر سعودی کسی اسلامی ملک کی نہیں ہے ، بلکہ بھارت کے کیرالہ میں لڑکیوں کے انجینئرنگ ڈگری کالج کی ہے ، جہاں خواتین تعلیم کے ساتھ ساتھ اپنی دنیا کو سنوار رہے ہیں
  • Claimed By : فردوش عالم
  • Fact Check : گمراہ کن
گمراہ کن
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later