X

فیکٹ چیک: اسکول میں پریئر کے وقت اذان کا یہ ویڈیو جھارکھنڈ کا نہیں، آسام کا ہے

وشواس نیوز کی جانچ میں یہ دعویٰ گمراہ کن نکلا۔ وائرل ہونے والا ویڈیو آسام کے جورہاٹ میں واقع ایک اسکول کا ہے، جسے جھارکھنڈ کے نام پر گمراہ کن دعوے کے ساتھ وائرل کیا جا رہا ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: July 13, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ جھارکھنڈ میں اسکول کی نماز کے تنازعہ کے درمیان سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ایک ویڈیو میں، یونیفارم میں بچوں کو اسکول کے صحن میں اذان دیتے ہوئے دیکھا اور سنا جاسکتا ہے۔ دعویٰ کیا جارہا ہے کہ یہ ویڈیو جھارکھنڈ کے ایک اسکول کا ہے جہاں ہندو بچوں کو زبردستی اذان بھی دلائی جارہی ہے۔

وشواس نیوز کی جانچ میں یہ دعویٰ گمراہ کن نکلا۔ وائرل ہونے والا ویڈیو آسام کے جورہاٹ میں واقع ایک اسکول کا ہے، جسے جھارکھنڈ کے نام پر گمراہ کن دعوے کے ساتھ وائرل کیا جا رہا ہے۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

وائرل ویڈیو کو شیئر کرتے ہوئے ٹوئٹر صارف ‘اومکار مہاکال’ نے اسے جھارکھنڈ کے ایک اسکول کا بتایا ہے۔

مختلف سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر کئی دیگر صارفین نے اس ویڈیو کو ایک جیسے دعووں کے ساتھ شیئر کیا ہے۔

پڑتال

وائرل ویڈیو کے کی فریموں کی گوگل ریورس امیج سرچ میں 6 جون 2022 کو آسام نیوز18 کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والی ایک رپورٹ ملی، جس میں استعمال کی گئی تصویر وائرل ویڈیو کے فریم سے ملتی ہے۔

دی گئی معلومات کے مطابق، ”آسام کے مشرقی جورہاٹ کے تعلیمی علاقے کے ماریانی کے ہیمالائی گیان بیکاش پرائمری اسکول میں پانچویں جماعت کے طالب علم کے اذان دینے کا ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوا ہے۔ ‘نیوز اینڈ اونلی نیوز’ نامی یوٹیوب چینل پر بھی یہ ویڈیو ملا، یہاں اسے 4 جون 2022 کو اپ لوڈ کیا گیا ہے۔

یہ ویڈیو آسام کے ماریانی کے گیان وکاس پرائمری اسکول کا ہے، جہاں صبح کے وقت طلبہ کو اذان پڑھائی جاتی تھی۔ آسام کے مقامی ٹی وی چینل ٹائم 8 نے بھی اس معاملے سے متعلق ایک ویڈیو اپ لوڈ کیا ہے، جس میں اس معاملے کے حوالے سے اسکول ٹیچر کی جانب سے دی گئی وضاحت بھی موجود ہے۔

ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق ‘معاملہ سامنے آنے کے بعد جورہاٹ کے ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر نے اسکول کے پرنسپل کے خلاف وجہ بتاؤ نوٹس جاری کیا ہے۔ انہوں نے کہا، “اساتذہ نے ہمیں بتایا کہ اذان دینا پہلے سے طے شدہ نہیں تھا۔ کیوز، گانے اور دعا جیسے پروگرام منعقد کیے جاتے ہیں‘۔

رپورٹ میں ایک سکول ٹیچر کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ وہ نہیں جانتے تھے کہ طالب علم صبح کی اسمبلی کے دوران اذان دے دیگا۔ انہوں نے کہا، ‘طالب علم اچانک اسمبلی کے سامنے آیا اور اذان دینا شروع کر دیا۔ وہ کچھ کرنا چاہتا تھا لیکن اساتذہ کو بالکل خبر نہیں تھی کہ وہ اذان دینا شروع کر دے گا۔

واضح رہے کہ اذان دینے کا عمل سکول کے کسی پروگرام کا حصہ نہیں ہے۔ رپورٹ کے مطابق اسکول میں اذان کا یہ واقعہ باقاعدہ تو نہیں، اس کی بھی تحقیقات کی جارہی ہیں۔

ہمارے ساتھی دینک جاگرن کے دھنباد انچارج دیپک پانڈے نے تصدیق کرتے ہوئے کہا، ‘وائرل ہونے والا ویڈیو جھارکھنڈ کے جمتارا کا نہیں ہے۔ دونوں ویڈیوز بالکل مختلف ہیں‘۔

واضح رہے کہ وائرل ہونے والا ویڈیو جھارکھنڈ کا نہیں ہے، جہاں حال ہی میں ایک اسکول میں بچوں نے ہاتھ جوڑ کر دعا کرنے کے بجائے ہاتھ باندھ کر دعا کی تھی۔ انڈیا ٹی وی کے آفیشل یوٹیوب چینل پر اپ لوڈ کیے گئے ویڈیو بلیٹن کے مطابق، ‘جھارکھنڈ کے گڑھوا میں مسلم کمیونٹی کے دباؤ میں ہاتھ جوڑ کر نماز کے نظام کو تبدیل کرنے کا الزام ہے۔ گزشتہ کئی سالوں سے اسکول میں بچے ہاتھ باندھ کر پریئر رہے تھے، میڈیا میں یہ طریقہ کار میں تبدیلی کی خبریں آنے کے بعد ہلچل مچ گئی۔ اس معاملے کی تحقیقات بھی کی گئی ہے‘۔

وائرل ویڈیو کو گمراہ کن دعوے کے ساتھ شیئر کرنے والے صارف کو ٹوئٹر پر 100 سے زائد لوگ فالو کر رہے ہیں۔

نتیجہ: وشواس نیوز کی جانچ میں یہ دعویٰ گمراہ کن نکلا۔ وائرل ہونے والا ویڈیو آسام کے جورہاٹ میں واقع ایک اسکول کا ہے، جسے جھارکھنڈ کے نام پر گمراہ کن دعوے کے ساتھ وائرل کیا جا رہا ہے۔

  • Claim Review : جھارکھنڈ میں کانگریس کے 75% مسلم آبادی والے گاؤں کے اسکول پر دباؤ ڈال کر ہندو طلبہ کو بھی اللہ کی عبادت کرنے پر مجبور کیا گیا۔
  • Claimed By : اومکار مہاکال
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later