X

فیکٹ چیک: مسلم رجمنٹ کو ختم کئے جانے کا دعوی پاکستانی پروپیگنڈا، ہندوستانی فوج میں کبھی نہیں تھا ایسا رجمنٹ

  • By Vishvas News
  • Updated: July 30, 2020

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ ہندوستانی فوج سے متعلق ایک پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے ، جس میں یہ دعوی کیا گیا ہے کہ بھارت اور پاکستان کے مابین 1965 کی جنگ کے دوران فوج میں موجود مسلم رجمنٹ نے پاکستان کے خلاف جنگ لڑنے سے انکار کردیا تھا۔

وشواس نیوز کی تحقیقات میں یہ دعویٰ جھوٹا اور فوج کے خلاف پروپیگنڈا ثابت ہوا۔ ہندوستان کی فوج میں آج تک کوئی بھی مسلم رجمنٹ نہیں ہوا ہے اور نہ ہی فوج میں ایسا کوئی واقعہ پیش آیا ہے جہاں فوجیوں نے جنگ کے دوران لڑنے سے انکار کردیا۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک پیج ’کراڑی ہندو سماج‘ نے وائرل پوسٹ کو شیئر کرتے ہوئے لکھا ہے، ’’کیا آپ کو پتہ ہے 1965 میں انڈو پاک جنگ میں مسلم رجمنٹ نے جنگ لڑنے سے انکار کر دیا تھا‘‘۔

پڑتال

ہندوستانی فوج میں رجمنٹ کو جاننے کے لئے ہم نے ہندوستانی فوج کی آفیشیئل ویب سائٹ کو چیک کیا۔ ویب سائٹ پر موجود جانکاری کے مطابق، ہندوستانی فوج میں مدراس رجمنٹ، راجپوت رجمنٹ، سکھ رجمنٹ، بہار رجمنٹ، گورکھا رائفلرس، ناگا رجمنٹ سمیت دیگر رجمنٹ موجود ہیں لیکن اس میں کہیں بھی مسلم رجمنٹ کا ذکر نہیں ہے۔

Source-Indian Army official website

سرچ میں ہمیں ہندوستانی فوج کے ریٹائرڈ لفٹیننٹ جنرل سید اتا حسنین کا لکھا ایک آرٹیکل ملا۔ حسنین فی الحال کشمیر یونیورسٹی کے چانسلر ہیں۔
‘The ‘missing’ muslim regiment: Without comprehensive rebuttal, Pakistani propaganda dupes the gullible across the board’
نام سے شائع اس آرٹیکل میں انہوں نے اس معاملہ کو پاکستان کے انٹر سروسز پبلک رلیشنس (آئی ایس پی آر) کا پروپیگینڈا بتایا ہے۔

ToI के प्रिंट संस्करण में 30 नवंबर 2017 को प्रकाशित आर्टिकल

انہوں نے لکھا ، ’’پاکستانی پروپیگنڈے کا ثبوت یہ ہے کہ 1965 تک ہندوستانی فوج میں ایک مسلم رجمنٹ ہوا کرتا تھا اور 20،000 مسلمانوں نے جنگ کے دوران پاکستان سے لڑنے سے انکار کرنے کے بعد اس رجمنٹ کو توڑ دیا گیا تھا۔ لہذا ، ایک بھی مسلمان فوجی 1971 کی جنگ میں نہیں لڑا (دوسرا جھوٹ)‘‘۔

مضمون میں دی گئی معلومات کے مطابق ، ’’آزادی کے بعد ، زیادہ تر مسلمان افسران اور سپاہی پاکستان چلے گئے اور فوج میں اس برادری کے لوگوں کی تعداد میں ایک بار پھر کمی واقع ہوئی۔ تاہم ، یہاں بہت سے سب یونٹ ہیں ، جن میں صرف مسلمان ہیں‘‘۔


ToI के प्रिंट संस्करण में 30 नवंबर 2017 को प्रकाशित  आर्टिकल

مضمون کے مطابق ، ’’فوج میں کبھی بھی مسلم رجمنٹ نہیں تھا اور یقینا 1965 میں ایسا کچھ نہیں تھا۔ تاہم ، مختلف رجمنٹوں میں مسلم فوجیوں کی بہادری کی بہت سی مثالیں موجود ہیں۔ آج کے وقت میں پرمویر چکر عبد الحمید کو کم دیا کیا جاتا ہے۔ میجر (جنرل) محمد ذکی (ویر چکرا) اور میجر عبد رفیع خان (بعد ازاں ویر چکرا) ، جنہوں نے اپنے چچا میجر جنرل صاحبزادہ یعقوب خان سے لڑائی کی ، جو پاکستانی ڈویژن کو کمانڈ کر رہے تھے، کے ساتھ جنگ لڑی۔ 1965 کی جنگ میں مسلم فوجیوں کی ایسی مثالیں موجود ہیں۔ 1971 کی جنگ میں بھی یہی ہوا‘‘۔

نیوز سرچ میں ہمیں ’انڈین ایکسپریس‘ میں شائع ہوا ایک آرٹیکل ملا، جس سے ہندوستان کے خلاف پاکستان آئی ایس پی آر کے چلائے جا رہے ’انفو وار‘ کے دعوی کی تصدیق ہوتی ہے۔

انڈین ایکسپریس میں شائع آرٹیکل

مضمون کے مصنف قومی سلامتی کے مشاورتی بورڈ کے رکن ہیں۔ مضمون میں دی گئی معلومات کے مطابق ، ’آئی ایس پی آر نے ہزاروں نوجوانوں کو بھرتی کیا ہے جو ٹویٹر ، واٹس ایپ ، یوٹیوب اور فیس بک جیسے مختلف سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر جعلی اکاؤنٹ بنا کر بھارت مخالف پروپیگنڈہ کررہے ہیں‘‘۔

فوج میں رجمنٹ سسٹم اور وائرل دعووں کی حقیقت جاننے کے لئے ، ہم نے آرمی کرنل (ریٹائرڈ) وجے اچاریہ سے رابطہ کیا اور انہوں نے گفتگو کے آغاز میں ہی اسے پاکستانی فوج کا پروپیگنڈا قرار دیا۔ انہوں نے 1965 کی جنگ میں مسلمانوں کی بغاوت اور مسلم رجمنٹ کی موجودگی کے دعوے کو پاکستان کا پروپیگنڈا قرار دیتے ہوئے کہا کہ پاکستانی فوج کی بھارت کے خلاف لڑائی کا ایک بڑا ہتھیار پروپیگنڈا ہے اور یہ کام پاکستانی فوج کے ونگ آئی ایس پی آر کے ذریعہ کیا جاتا ہے۔

کرنل (ریٹائرڈ) آچاریہ نے کہا ، ’’ہندوستانی فوج میں کبھی بھی مسلم رجمنٹ نہیں ہوئی ہے۔ یہ پاکستانی فوج کا پروپیگنڈا ہے۔ انہوں نے کہا ، ’’ہندوستانی فوج میں ابھی تک ایسا کوئی واقعہ سامنے نہیں آیا ہے، جب فوجیوں نے جنگ کے دوران جنگ میں جانے سے انکار کردیا‘‘۔

انہوں نے کہا ، ’’سکھ رجمنٹ کی ہندوستانی فوج میں موجودگی ہے اور یہ مذہب کے نام سے منسوب واحد رجمنٹ ہے لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ اس رجمنٹ میں صرف سکھ مذہب کے لوگ بھرتی کیے جاتے ہیں۔ جیسے بہار رجمنٹ کہنے کا مطلب یہ نہیں ہے کہ صرف بہار کے لوگ ہی اس میں داخل ہوں گے‘‘۔

آچاریہ نے بتایا ، ’’مثال کے طور پر، جموں و کشمیر لائٹ انفنٹری میں مسلمان فوجیوں کی تعداد زیادہ ہوتی ہے۔ آرٹیلری اور آرمڈ کور میں بھی ان کی موجودگی ہے۔ لیکن یہ کہنا غلط ہے کہ سکھ رجمنٹ میں صرف سکھ مذہب کے لوگ موجود ہوں گے۔ جہاں تک پری ڈومیننس کا تعلق ہے تو وہ دیکھنے کو مل سکتا ہے، لیکن یہ ممکن نہیں ہے کہ راجپوت رجمنٹ میں صرف راجپوت موجود ہوں‘‘۔

اچاریہ بتاتے ہیں انگریزوں کے دور میں شناخت مبنی رجیمنٹ تشکیل دیا گیا اور اس کے پیچھے کی وجہ ’مارشیل اور ’نان مارشیل ریس کی درجہ بندی‘ تھی۔ لیکن آزادی کے بعد ، اس درجہ بندی کو جامع بنانے کا عمل شروع ہوا اور وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ شناخت پر مبنی رجمنٹ کی شکل مکمل طور پر بدل گئی۔ 1965 اور 1971 کی جنگوں کے بعد ، اس نظام کو تبدیل کرنے کے عمل کو تیز کیا گیا اور اس وقت فوج کا موجودہ اندراج نظام ریاست کی آبادی کے متناسب نظام پر مبنی ہے۔

یعنی ، رجمنٹ کا نظام جو انگریزوں کے دور میں تھا اب مکمل طور پر بدل گیا ہے۔ رجمنٹ میں مختلف علاقوں سے آنے والے فوجیوں کی موجودگی ، جو ایک خاص شناخت کے طور پر جانا جاتا ہے ، اب معمول ہے۔

فیس بک پیج ’کراڑی ہندو سماج‘ کی جانب سے فرضی پوسٹ شیئر کیا گیا ہے۔ جب ہم نے اس پیج کی سوشل اسکیننگ کی تو پایا کہ ایک مخصوص آئیڈیولاجی کی جانب متوجہ پوسٹ مذکورہ پیج سے شیئر کی جاتی ہیں۔

نتیجہ: سال 1965 کی ہندوستان۔ پاکستان جنگ کے دوران مسلم فوجیوں کے پاکستان کے خلاف جنگ نہ لڑنے کے دعوی کے ساتھ وائرل ہو رہی پوسٹ فرضی ہے۔ ہندوستانی فوج میں کبھی بھی مسلم رجمنٹ نہیں تھی، جسے 1965 کی جنگ کے بعد ختم کئے جانے کا دعوی کیا جا رہا ہے۔

  • Claim Review : دعوی کیا گیا ہے کہ بھارت اور پاکستان کے مابین 1965 کی جنگ کے دوران فوج میں موجود مسلم رجمنٹ نے پاکستان کے خلاف جنگ لڑنے سے انکار کردیا تھا
  • Claimed By : FB Page- किराड़ी हिन्दू समाज
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
    فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Post saved! You can read it later