X

فیکٹ چیک: بھارت۔ چین تناؤ کے دوران ہی آر بی آئی کے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں بینکنگ خدمات شروع کرنے کی منضوری دئے جانے کا دعوی غلط

  • By Vishvas News
  • Updated: June 12, 2020

نئی دہلی (وشواس ٹیم)۔ سرحدی علاقوں میں بھارت اور چین کے مابین جاری تعطل کے دوران، سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ وائرل ہورہی ہے جس میں دعوی کیا جا رہا ہے کہ ریزرو بینک آف انڈیا (آر بی آئی) نے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں بینکاری خدمات شروع کرنے کی اجازت دے دی ہے۔

وائرل پیغام کو دیکھتے ہوئے ایسا لگ رہا ہے کہ دونوں ممالک کے مابین موجودہ تناؤ کے دوران، آر بی آئی نے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں کاروبار کرنے کی منظوری دی ہے۔ وشواس نیوز کی پڑتال میں یہ دعوی جھوٹا نکلا۔

وائرل پوسٹ کیا ہے؟

وائرل پوسٹ (آرکائیو لنک) کو شیئر کرتے ہوئے، فیس بک صارف ’عامر سہیل‘ نے لکھا
‘‘RBI allows Bank of China to offer regular Banking services in India.’’

اردو ترجمہ: ، ’’آر بی آئی نے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں بینکنگ سروس شروع کرنے کی منظوری دی۔‘‘۔

پڑتال

دیگر صارفین نے بھی اس پوسٹ کو اسی طرح کے دعووں کے ساتھ سوشل میڈیا کے مختلف پلیٹ فارمز پر شیئر کیا ہے۔ ٹویٹر صارف ‘کرنل تیک پال سنگھ’ نے لکھا ، ’چینی ایپ کو حذف کرنے، چینی مصنوعات کو نہ خریدنے، چین کو آن لائن ٹرول کرنے، میک ان انڈیا اور یوٹیوب کے ویڈیوز کو ہمارے جیسے احمقوں کو مصروف رکھنے کا طریقہ ہے۔ . (دریں اثنا) آر بی آئی نے بھارت میں بینکنگ سروس شروع کرنے کے لئے بینک آف چائنہ کو لائسنس دیا ہے‘۔

فیس بک صارف ‘ایاز منصوری’ نے اس وائرل پوسٹ (آرکائو لنک) شیئر کرتے ہوئے لکھا ، ’’کیا واقعی یہ سچ ہے؟ اگر ایسا ہے تو ، بائیکاٹ کے تمام بیانات سے کیا ہوا‘‘۔

ہر جگہ ، ’اکنامک ٹائمز‘ کی رپورٹ کا وائرل پوسٹوں میں استعمال کیا گیا ہے۔ نیوز سرچ میں، ہمیں یہ خبر اکنامک ٹائمز کی ویب سائٹ پر ملی۔ خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کے حوالے سے 4 جون 2018 کو شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق ، ’’سرکاری ذرائع کے مطابق، ریزرو بینک آف انڈیا نے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں کام شروع کرنے کی اجازت دے دی ہے‘‘۔

اس رپورٹ کے مطابق ، ’’آر بی آئی نے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں پہلی برانچ کھولنے کی اجازت دی ہے۔ برانچ کے افتتاح کی منظوری کا فیصلہ وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ چین کے صدر کے ساتھ کئے گئے عزم کے مطابق ہے۔ ’’ رپورٹ کے مطابق، بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں برانچ کھولنے کی اجازت دینے کا فیصلہ ڈوکلام میں کئی مہینوں تک جاری رہا۔ اس کے بعد فوجی تعطل کا خاتمہ ہوا۔

وشواس نیوز نے اس بارے میں آر بی آئی کے ترجمان سے رابطہ کیا۔ اس حقیقت کی تصدیق کرتے ہوئے کہ اس خبر کو پرانی قرار دیا، انہوں نے کہا ، ’’بینک آف چائنہ کے ہندوستان میں برانچ کھولنے کی منضوری کا معاملہ ابھی کا نہیں ہے۔ یہ پرانا معاملہ ہے‘‘۔

سال 2018 میں دی گئی منضوری کے بعد ایک اگست 2019 کو آر بی آئی کی جانب سے جاری گردہ سرکلر میں ’بینک آف چائنہ لمیٹڈ‘ کو ریزرو بینک آف انڈیا ایکٹ 1934 کی دوسری فہرست میں شامل کیا گیا تھا۔

اس کے بعد، آر بی آئی نے اس بینک کو ہندوستان میں کام کرنے والے غیر ملکی بینکوں کی فہرست میں شامل کیا۔

ہندوستان میں کام کرنے والے غیر ملکی بینکوں کی فہرست میں دیگر بینکوں کے علاوہ ، ’بینک آف چائنہ‘ کا نام آر بی آئی کی ویب سائٹ پر بھی دیکھا جاسکتا ہے۔

اب باری تھی اس پوسٹ کو فرضی طور پر شیئر کرنے والے فیس بک صارف ’عامر سہیل‘ کی سوشل اسکیننگ کرنے کی۔ ہم نے پایا کہ اس صارف کا تعلق مغربی بنگال کے مرشیدآباد سے ہے۔

نتیجہ: لداخ میں بھارت اور چین کے مابین جاری تعطل کے دوران، ریزرو بینک آف انڈیا نے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں بینکاری خدمات شروع کرنے کی اجازت دینے کا دعویٰ غلط ہے۔ سال 2018 میں ، آر بی آئی نے بینک آف چائنہ کو ہندوستان میں پہلی برانچ کھولنے کی اجازت دی تھی۔ اسی پرانی خبر کو بھارت اور چین کے درمیان موجودہ تعطل سے جوڑ کر پھیلایا جا رہا ہے۔

  • Claim Review : ہندوستان۔ چین کشیدگی کے دوران ہی آر بی آئی کے بینک آف چائنہ کو بھارت میں بینکنگ خدمات شروع کئے کی منضوری دئے
  • Claimed By : FB User- Amir Sohail
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
    فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Post saved! You can read it later