X

فیکٹ چیک: مایاوتی کا سال 2020 کا پرانا بیان اب وائرل

وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ پتہ چلا کہ مایاوتی کا پرانا بیان، جو ایم ایل سی الیکشن سے متعلق تھا، اب اسمبلی انتخابات کے درمیان غلط سیاق و سباق کے ساتھ وائرل ہو رہا ہے۔ ہماری تحقیقات میں وائرل پوسٹ گمراہ کن نکلی ہے۔ مایاوتی کے اس بیان کو اب بہت سے صارفین وائرل کر رہے ہیں۔

  • By Vishvas News
  • Updated: January 23, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ یوپی اسمبلی انتخابات کو لے کر ریاست میں ماحول بنا ہوا ہے۔ سڑکوں سے لے کر سوشل میڈیا تک ہر جگہ الیکشن سے متعلق سرگرمیاں نظر آ رہی ہیں۔ ان سب کے درمیان اب بی ایس پی سربراہ مایاوتی کا ایک بیان وائرل ہو رہا ہے۔ اس میں وہ مبینہ طور پر یہ کہتے ہوئے دیکھی جا سکتی ہیں کہ وہ بی جے پی کی حمایت کرتی ہیں۔ وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ پتہ چلا کہ مایاوتی کا پرانا بیان، جو ایم ایل سی الیکشن سے متعلق تھا، اب اسمبلی انتخابات کے درمیان غلط سیاق و سباق کے ساتھ وائرل ہو رہا ہے۔ ہماری تحقیقات میں وائرل پوسٹ گمراہ کن نکلی ہے۔ مایاوتی کے اس بیان کو اب بہت سے صارفین وائرل کر رہے ہیں۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک صارف کشور گوئل نے 18 جنوری کو ایک پوسٹ میں لکھا: ‘بدقسمتی کی حقیقی تصویر‘۔

پوسٹ میں نیوز چینل کی بریکنگ پلیٹ استعمال کی گئی۔ اس میں مایاوتی کی تصویر موجود تھی۔ اس میں لکھا تھا مایاوتی کا نشانا، اگر مجھے بی جے پی کا ساتھ دینا ہے تو میں کروں گی: مایاوتی

سوشل میڈیا پر کئی دیگر صارفین نے بھی اسی طرح کے اور اسی طرح کے دعووں کے ساتھ ویڈیو شیئر کی ہے۔ فیس بک پوسٹ کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھا جا سکتا ہے۔

پڑتال

وشواس نیوز نے یوپی اسمبلی انتخابات 2022 کے تناظر میں بی ایس پی سپریمو مایاوتی کے وائرل بیان کی حقیقت جاننے کے لیے سب سے پہلے گوگل ریورس امیج ٹول کا استعمال کیا۔ اس ٹول میں، وائرل پوسٹ کو اپ لوڈ کرکے، ہم نے متعلقہ مطلوبہ الفاظ سے اصل خبروں کی تلاش شروع کردی۔

ہمیں زی نیوز کی ویب سائٹ پر ایک خبر ملی۔ 29 اکتوبر 2020 کو شائع ہونے والی اس خبر میں بتایا گیا کہ مایاوتی نے ایم ایل سی انتخابات میں ایس پی کو جواب دینے کے لیے بی جے پی کی حمایت کرنے کی بات کہی تھی۔ خبر میں لکھا گیا، “مایاوتی نے سماج وادی پارٹی کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ انہوں نے سازش کے تحت 7 ایم ایل اے کو توڑا ہے، ان کے جھوٹے حلف نامے حاصل کیے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ کارروائی ایس پی کے لیے بھاری ہوگی۔ اب وہ سماج وادی پارٹی کو سبق سکھانے کے لیے بی جے پی کی حمایت بھی کر سکتی ہیں۔ مایاوتی نے یہ بھی کہا ہے کہ وہ پیچھے نہیں ہٹیں گی چاہے انہیں ایس پی کو سبق سکھانے کے لیے بی جے پی کو ووٹ دینا پڑے۔ ایم ایل سی انتخابات میں بی ایس پی منہ توڑ جواب دینے کی پوری کوشش کرے گی۔ زی نیوز کی مکمل خبر یہاں پڑھی جا سکتے ہیں۔

وشواس نیوز کو تحقیقات کے دوران زی اترپردیش اتراکھنڈ چینل کا فیس بک لائیو بھی ملا۔ یہ 29 اکتوبر 2020 کو کیا گیا تھا۔ ہمیں معلوم ہوا کہ اب جو سکرین شاٹ وائرل ہو رہا ہے وہ دراصل زی اتر پردیش اتراکھنڈ چینل کا پرانا سکرین شاٹ ہے۔ لائیو کے 14ویں منٹ پر، ہم نے وہی کنٹینٹ دیکھا، جو اب وائرل ہو رہا ہے۔ اسے یہاں دیکھا جا سکتا ہے۔

سرچ کے دوران، وشواس نیوز کو اے این آئی کے ٹویٹر ہینڈل پر ایک پرانا ویڈیو ملا۔ مایاوتی کی پریس کانفرنس کا یہ ویڈیو 29 اکتوبر 2020 کو اپ لوڈ کیا گیا تھا۔ اس میں بھی مایاوتی کو ایم ایل سی انتخابات کے تناظر میں ایس پی امیدواروں کو شکست دینے کے لیے بی جے پی یا دیگر امیدواروں کی حمایت کرنے کی بات کرتے ہوئے دیکھا گیا۔ مکمل ویڈیو یہاں دیکھیں۔

وشواس نیوز نے اپنی تحقیقات کو آگے بڑھاتے ہوئے بی ایس پی کے قومی ترجمان فیضان خان سے رابطہ کیا۔ ان کے ساتھ وائرل پوسٹ کو واٹس ایپ پر شیئر کیا۔ وشواس نیوز سے بات چیت میں انہوں نے بتایا کہ بی ایس پی سربراہ کے پرانے بیان کو بغیر کسی سیاق و سباق کے وائرل کیا جا رہا ہے۔ یہ جعلی ہے۔

تحقیقات کے آخری مرحلے میں فیس بک صارف کشر گوئل کی سوشل اسکیننگ کی گئی۔ معلوم ہوا کہ صارف کا تعلق کسی سیاسی جماعت سے ہے۔ 1631 لوگ اس صارف کو فالوو کرتے ہیں اور مدھیہ پردیش کے مندسور سے اس کا تعلق ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ پتہ چلا کہ مایاوتی کا پرانا بیان، جو ایم ایل سی الیکشن سے متعلق تھا، اب اسمبلی انتخابات کے درمیان غلط سیاق و سباق کے ساتھ وائرل ہو رہا ہے۔ ہماری تحقیقات میں وائرل پوسٹ گمراہ کن نکلی ہے۔ مایاوتی کے اس بیان کو اب بہت سے صارفین وائرل کر رہے ہیں۔

  • Claim Review : مایاوتی کا پرانا بیان
  • Claimed By : کشور گوئل
  • Fact Check : گمراہ کن
گمراہ کن
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later