X

فیکٹ چیک: یوگی آدتیہ ناتھ کے قافلے کو دکھائے گئے کالے جھنڈے کا 2017 کا ویڈیو فرضی دعوی کے ساتھ وائرل

وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی پڑتال میں پایا کہ اس کا دعوی فرضی ہے۔ یہ 2017 کا پرانی ویڈیو ہے اور اس وقت یہ معاملہ ہر طرف چھایا ہوا تھا۔

  • By Vishvas News
  • Updated: December 28, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہو رہا ہے، جس میں کچھ لوگ یوگی آدتیہ ناتھ کے قافلے کو کالا جھنڈا دکھاتے ہوئے نظر آ رہے ہیں۔ ویڈیو شیئر کرتے ہوئے صارفین دعویٰ کر رہے ہیں کہ یہ حالیہ ویڈیو ہے اور کسی میڈیا نے اس معاملے کو کوریج نہیں دی۔ وشواس نیوز نے جب اس ویڈیو کو چیک کیا تو ہمیں پتہ چلا کہ وائرل پوسٹ فرضی ہے۔ یہ 2017 کا پرانا ویڈیو ہے اور اس وقت یہ معاملہ ہر طرف کوور بھی کیا گیا تھا۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

وائرل ویڈیو کو شیئر کرتے ہوئے ایک فیس بک صارف نے لکھا، ‘آج یوپی کے سی ایم یوگی پر کھلا حملہ۔ کسی ٹی وی چینل نے اسے نہیں دکھایا۔

پوسٹ کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھیں۔

پڑتال

اپنی تحقیقات شروع کرنے کے لیے، ہم نے پہلے ویڈیو کو غور سے دیکھا۔ ویڈیو میں 34 سیکنڈ کے فریم میں ایک بورڈ پر ’راما ڈگری کولیج‘ لکھا ہوا نظر آیا۔ سرچ کرنے پر معلوم ہوا کہ راما ڈگری کالج لکھنؤ کے چنہٹ میں واقع ہے۔

اس بنیاد پر، ہم نے تحقیقات کو آگے بڑھایا اور ہمیں این ڈی ٹی وی کے یوٹیوب چینل پر وائرل ویڈیو کے فریموں سے مماثل ایک ویڈیو ملا۔

جون 2017 کو اپ لوڈ کی گئی اس خبر میں بتایا گیا کہ پچھلے دنوں لکھنؤ میں یوگی آدتیہ ناتھ کے قافلے کو کالے جھنڈے دکھانے کا معاملہ پیش آیا تھا۔ جس میں کچھ طلباء نے ان کی گاڑی کے سامنے کالے جھنڈے دکھائے تھے اور اب ان لوگوں کی ضمانت مسترد کر دی گئی ہے۔ مکمل ویڈیو نیچے دیکھا جا سکتا ہے۔

ہمیں اسی معاملے سے متعلق خبر این ڈی ٹی وی کی ویب سائٹ پر 10 جون 2017 کو شائع ہوئی ملی۔ دی گئی تفصیلات کے مطابق’بدھ کو وزیر اعلیٰ لکھنؤ یونیورسٹی کے ایک پروگرام میں گئے تھے، جب ان کے قافلے کو طلبہ نے کالے جھنڈے دکھائے۔ ان طلباء کو گرفتار کر لیا گیا۔ 12 طالبات میں دو طالبات بھی شامل تھیں‘۔

ویڈیو کی تصدیق کرنے کے لیے، ہم نے وائرل ویڈیو کو لکھنؤ سے اپنے ساتھی دینک جاگرن رپورٹر اجے سریواستو کے ساتھ شیئر کیا۔ انہوں نے بتایا کہ یہ ویڈیو کئی سال پرانا ہے۔ اس وقت سماج وادی پارٹی سے تعلق رکھنے والے کچھ طلبہ نے یوگی آدتیہ ناتھ کے قافلے کو روک دیا تھا۔ یہ اسی کا ویڈیو ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ اس وقت یہ معاملہ بہت زیادہ اجاگر ہوا تھا اور ہر جگہ چھایا بھی گیا تھا۔

جعلی پوسٹ شیئر کرنے والے فیس بک صارف چنتن مہتا کی سوشل اسکیننگ میں ہم نے پایا کہ صارف گجرات کا رہائشی ہے اور اسے 1582 لوگ فالو کرتے ہیں۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی پڑتال میں پایا کہ اس کا دعوی فرضی ہے۔ یہ 2017 کا پرانی ویڈیو ہے اور اس وقت یہ معاملہ ہر طرف چھایا ہوا تھا۔

  • Claim Review : آج یوپی کے سی ایم یوگی پر کھلا حملہ۔ کسی ٹی وی چینل نے اسے نہیں دکھایا۔
  • Claimed By : سی ایم سرکار
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later