X

فیکٹ چیک: رنجن گوگوئی کے نام پر وائرل کیا جا رہا ٹویٹ فرضی ہے

وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ تحقیقات سے پتہ چلا کہ سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس اور راجیہ سبھا ممبر رنجن گوگوئی کے پاس کوئی تصدیق شدہ ٹوئٹر اکاؤنٹ نہیں ہے۔ وائرل اسکرین شاٹ رنجن گوگوئی کے نام سے ایک پیروڈی ٹویٹر اکاؤنٹ کا ہے۔ کچھ لوگ اسے سچ مان کر وائرل کر رہے ہیں۔

  • By Vishvas News
  • Updated: July 9, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس اور موجودہ راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ رنجن گوگوئی کے ٹویٹ کے نام پر جعلی ٹویٹ کا اسکرین شاٹ سوشل میڈیا کے مختلف پلیٹ فارمز پر وائرل ہو رہا ہے۔ وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ تحقیقات سے پتہ چلا کہ سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس اور راجیہ سبھا ممبر رنجن گوگوئی کے پاس کوئی تصدیق شدہ ٹوئٹر اکاؤنٹ نہیں ہے۔ وائرل اسکرین شاٹ رنجن گوگوئی کے نام سے ایک پیروڈی ٹویٹر اکاؤنٹ کا ہے۔ کچھ لوگ اسے سچ مان کر وائرل کر رہے ہیں۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک صارف سنجے کمار رنوان نے 4 جولائی کو رنجن گوگوئی کے ٹویٹ کا وائرل اسکرین شاٹ پوسٹ کیا۔ اس میں ان کی ایک تصویر استعمال کی گئی تھی۔ اسکرین شاٹ میں لکھا تھا: ‘دہلی اقلیتی کمیشن کے چیئرمین، جس نے عرب ممالک کو ہندوستان پر حملہ کرنے کی دعوت دی، ظفر الاسلام غداری کا مقدمہ درج کرنے کے لیے معافی مانگ رہے ہیں۔ لیکن ہمیں معاف یا یقین نہیں کرنا چاہئے کیونکہ اس کی ذہنیت ہندوستان مخالف ہے۔

دوسرے صارفین بھی وائرل پوسٹ کو شیئر کر رہے ہیں۔ فیس بک پوسٹ کا مواد ویسا ہی لکھا ہے جیسا کہ یہاں ہے۔ اس کا آرکائیو ورژن یہاں دیکھا جا سکتا ہے۔ یہ فیس بک کے علاوہ ٹوئٹر پر بھی وائرل ہے۔

پڑتال

وشواس نیوز نے وائرل ٹویٹ کی حقیقت جاننے کے لیے سب سے پہلے وائرل اسکرین شاٹ میں موجود ٹوئٹر ہینڈل کو اسکین کرنا شروع کیا۔ اسکیننگ سے پتہ چلا کہ کسی نے اس نام سے رنجن گوگوئی کا فین پیج بنایا ہے۔

یہ ہینڈل اگست 2020 کو بنایا گیا تھا۔ 633 لوگ اسے فالو کرتے ہیں۔ اب تک کی سکیننگ میں یہ واضح ہو گیا ہے کہ رنجن گوگوئی کے نام سے منسوب اس ہینڈل میں کوئی صداقت نہیں ہے۔

وشواس نیوز نے ٹوئٹر پر رنجن گوگوئی کے آفیشل ٹویٹر اکاؤنٹ کو تلاش کرنا شروع کر دیا۔ ہمیں وہاں ان کا کوئی تصدیق شدہ ہینڈل نہیں مل سکا۔

دینک جاگرن میں سپریم کورٹ کو کوور کرنے والے صحافی مالا دکشت، جنہوں نے رنجن گوگوئی کے نام سے وائرل جعلی ٹویٹ کے حوالے سے بتایا کہ ماضی میں ان کے نام سے اس طرح کے کئی جعلی ٹویٹس وائرل ہو چکے ہیں۔ رنجن گوگوئی ٹوئٹر پر موجود نہیں ہیں۔

وشواس نیوز نے آخر کار فرضی پوسٹ کرنے والے صارف سے تفتیش کی۔ فیس بک صارف سنجے کمار رنوان کی سوشل سکیننگ میں پتہ چلا کہ نو ہزار سے زائد لوگ اس صارف کو فالو کرتے ہیں۔ فیس بک پر اس کے 5000 دوست ہیں۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ تحقیقات سے پتہ چلا کہ سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس اور راجیہ سبھا ممبر رنجن گوگوئی کے پاس کوئی تصدیق شدہ ٹوئٹر اکاؤنٹ نہیں ہے۔ وائرل اسکرین شاٹ رنجن گوگوئی کے نام سے ایک پیروڈی ٹویٹر اکاؤنٹ کا ہے۔ کچھ لوگ اسے سچ مان کر وائرل کر رہے ہیں۔

  • Claim Review : رنجن گوگوئی کا ٹویٹ
  • Claimed By : کمار رنوان
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later