X

فیکٹ چیک: تریپورہ تشدد کے نام پر وائرل ہوئی دہلی کے روہنگیا کیمپ کی پرانی تصویر

وشواس نیوز کی جانچ میں تریپورہ تشدد کے نام پر وائرل ہونے والی تصویر فرضی نکلی۔ دراصل، کچھ صارفین دہلی کے روہنگیا کیمپ میں لگی آگ کو تریپورہ کی تصویر بتا کر ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

  • By Vishvas News
  • Updated: November 7, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ تریپورہ میں تشدد کے درمیان سوشل میڈیا پر کئی فرضی پوسٹس بھی وائرل ہو رہی ہیں۔ اب ایک تصویر اس دعوے کے ساتھ وائرل ہو رہی ہے کہ یہ تصویر ایک مسلمان کی ہے جو قرآن اٹھا رہے ہیں۔ اس میں دو افراد کو کچھ مذہبی کتابیں اٹھائے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی تفصیل سے جانچ کی۔ تحقیقات سے معلوم ہوا کہ چند ماہ قبل دہلی میں روہنگیا کیمپ میں آگ لگ گئی تھی۔ جس کے بعد لوگوں نے اپنے جلے ہوئے گھروں سے اپنی مذہبی کتابیں نکال کر باہر نکالیں۔ اسی وقت کی تصویر اب وائرل ہو رہی ہے اور اسے تریپورہ تشدد سے جوڑ دیا گیا ہے۔ ہماری تحقیقات میں وائرل پوسٹ مکمل طور پر جعلی نکلی۔

کیا وائرل ہو رہا ہے

فیس بک صارف ایم ڈی اولی اللہ نے 29 اکتوبر کو ایک تصویر شیئر کی، جس میں دعویٰ کیا گیا: ‘مسلمان تریپورہ میں جلائے گئے قرآن کو اٹھا رہے ہیں’۔

پڑتال


وشواس نیوز نے وائرل تصویر کی چھان بین کے لیے گوگل ریورس امیج اور یانڈیکس سرچ کا استعمال کیا۔ ہمیں انسٹاگرام پر اصل تصویر ملی۔ 13 جون کو شائع ہونے والی اس تصویر میں بتایا گیا تھا کہ یہ دہلی کے کنچن کنج میں روہنگیا کیمپ میں آگ لگنے کے بعد کی ہے۔ اسے یہاں کلک کر کے دیکھا جا سکتا ہے۔

تحقیقات کے دوران ہمیں یہ تصویر آصف مجتبیٰ کے ٹوئٹر ہینڈل پر بھی ملی۔ 28 اکتوبر کو آصف نے لکھا کہ وائرل تصویر دہلی کے کنچن کنج میں روہنگیا کیمپ میں لگی آگ کی ہے۔ تریپورہ سے نہیں۔ نیچے مکمل ٹویٹ پڑھیں۔

وشواس نیوز نے تحقیقات کو آگے بڑھانے کے لیے آصف مجتبیٰ سے رابطہ کیا۔ انہوں نے ہمیں بتایا کہ وائرل تصویر تریپورہ کی نہیں ہے۔ یہ دہلی کے کنچن کنج میں روہنگیا کیمپ میں لگی آگ کی تصویر ہے۔ گھروں میں آگ لگنے کے بعد لوگوں نے اپنی مذہبی کتابیں بحفاظت باہر نکال لیں۔ یہ تصویر ان کے دوست محمد مہربان نے کلک کی تھی۔

جانچ کے اختتام پر وشواس نیوز نے فرضی پوسٹ کرنے والے صارف سے تفتیش کی۔ فیس بک صارف ایم ڈی اولی اللہ کی سوشل اسکیننگ سے انکشاف ہوا کہ صارف دمکا کا رہائشی ہے۔ ہمیں اس اکاؤنٹ سے مزید معلومات نہیں ملی۔

نتیجہ: وشواس نیوز کی جانچ میں تریپورہ تشدد کے نام پر وائرل ہونے والی تصویر فرضی نکلی۔ دراصل، کچھ صارفین دہلی کے روہنگیا کیمپ میں لگی آگ کو تریپورہ کی تصویر بتا کر ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later