X

فیکٹ چیک: کیرالہ کی طالبہ عائشہ رائنا کی تصویر رعنا ایوب کے نام سے ہوئی وائرل

تصویر میں نظر آنے والی خاتون صحافی رعنا ایوب نہیں بلکہ فریٹرنیٹی موومینٹ کی رہنما عائشہ رائنا ہیں۔ اسے کیرالہ پولیس نے 12 جون 2022 کو ملاپورم ضلع میں ہائی وے کی ناکہ بندی کے دوران پکڑا تھا۔

  • By Vishvas News
  • Updated: June 29, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر ایک خاتون کی تصویر شیئر کی جا رہی ہے جس میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ پولیس نے مظاہرے کے دوران رعنا ایوب کے ساتھ بدتمیزی کی۔ تصویر میں دیکھا جا سکتا ہے کہ خاتون پولیس اہلکار نعرے لگانے والی خاتون کا اسکارف زبردستی چھین رہی ہے۔ وشواس نیوز کی جانچ میں وائرل دعویٰ جھوٹا نکلا۔ تصویر میں نظر آنے والی خاتون صحافی رعنا ایوب نہیں بلکہ فریٹرنیٹی موومینٹ کی رہنما عائشہ رائنا ہیں۔ اسے کیرالہ پولیس نے 12 جون 2022 کو ملاپورم ضلع میں ہائی وے کی ناکہ بندی کے دوران پکڑا تھا۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

وائرل تصویر شیئر کرتے ہوئے فیس بک صارف زیب علی نے لکھا کہ ’جناح ٹھیک کہتے تھے، رعنا ایوب بہت بہادر لڑکی ہیں۔ اللہ ہمیشہ آپ کے ساتھ ہے‘۔

پوسٹ کے آرکائیو ورژن کو یہاں دیکھیں۔

پڑتال

وائرل دعوے کی حقیقت جاننے کے لیے ہم نے گوگل ریورس امیج کے ذریعے تصویر کو سرچ کیا۔ اس دوران ہمیں 13 جون 2022 کو فیس بک پیج ‘فراٹرنٹی موومنٹ کیرالہ’ پر اپ لوڈ کی گئی وائرل تصویر سے متعلق ایک پوسٹ ملی۔ صفحہ کا مطالعہ کرنے پر، ہمیں معلوم ہوا کہ برادرانہ تحریک، سیاسی تنظیم ویلفیئر پارٹی آف انڈیا کا طلبہ ونگ ہے۔ اس پیج پر شیئر کی گئی ایک نیوز کلپنگ کے مطابق وائرل تصویر میں نظر آنے والی خاتون عائشہ رائنا ہیں جو اس تنظیم کی رکن ہیں۔

پوسٹ میں دی گئی معلومات کے مطابق، برادرانہ فریٹرنیٹی موومینٹ نے یہ مظاہرہ 12 جون 2022 کو اپنی رہنما آفرین فاطمہ کی حمایت میں کیا تھا۔ دراصل، اتر پردیش پولیس نے پریاگ راج میں تشدد پر کارروائی کرتے ہوئے تشدد میں ملوث جاوید محمد کے گھر کو بلڈوزر سے تباہ کر دیا۔ اس کارروائی کے خلاف برادرانہ تحریک تنظیم نے 12 جون 2022 کو کیرالہ میں مظاہرہ کیا تھا۔

تحقیقات کے دوران، ہمیں 12 جون کو ملاپورم کے ‘نیشنل ہائی وے’ پر ہونے والے احتجاج سے متعلق عائشہ کے فیس بک ہینڈل پر ایک پوسٹ بھی ملی۔ ہمیں 13 جون کو یوٹویب چینل پر اپ لوڈ کردہ وائرل دعوے کی ایک ویڈیو رپورٹ ملی۔ یہاں بھی اس خاتون کا نام عائشہ رائنا بتایا گیا ہے جو کہ فریٹرنیٹی موومینٹ تنظیم کی رکن ہیں۔

مزید معلومات کے لیے، ہم نے فریٹرنیٹی موومینٹ کی تنظیم کے جنرل سیکرٹری محمد عاصم سے رابطہ کیا۔ انہوں نے ہمیں بتایا کہ وائرل ہونے والا دعویٰ غلط ہے۔ یہ تصویر ہماری تنظیم کی رکن عائشہ رائنا کی ہے۔ 12 جون کو، ہم نے آفرین فاطمہ کی حمایت میں کیرالہ کے ملاپورم میں ‘نیشنل ہائی وے’ پر مظاہرہ کیا۔ یہ تصویر اس دوران لی گئی ہے۔

تحقیقات کے اختتام پر، ہم نے اس صارف کی سوشل اسکیننگ کی جس نے جعلی دعویٰ شیئر کیا۔ اسکیننگ سے ہمیں معلوم ہوا کہ فیس بک پر صارف کے 64 دوست ہیں۔ صارف پاکستان کا رہائشی ہے۔

نتیجہ: تصویر میں نظر آنے والی خاتون صحافی رعنا ایوب نہیں بلکہ فریٹرنیٹی موومینٹ کی رہنما عائشہ رائنا ہیں۔ اسے کیرالہ پولیس نے 12 جون 2022 کو ملاپورم ضلع میں ہائی وے کی ناکہ بندی کے دوران پکڑا تھا۔

  • Claim Review : جناح ٹھیک کہتے تھے، رعنا ایوب بہت بہادر لڑکی ہیں۔ اللہ ہمیشہ آپ کے ساتھ ہے
  • Claimed By : زیب علی
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later