X

فیکٹ چیک: وائرل تصویر کا دہلی کے جہانگیر پوری میں ہوئے تشدد سے نہیں ہے کوئی تعلق

وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ ہماری تحقیقات میں وائرل دعویٰ جعلی نکلا۔ وائرل تصویر تقریباً ایک دہائی سے انٹرنیٹ پر موجود ہے۔ اس تصویر کا جہانگیر پوری کے علاقے میں ہونے والے واقعے سے کوئی تعلق نہیں۔

  • By Vishvas News
  • Updated: April 30, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ دہلی کے جہانگیر پوری علاقے میں جلوس کے دوران ہنگامہ آرائی کے بعد سوشل میڈیا پر فرضی پوسٹس کا سلسلہ جاری ہے۔ اب سوشل میڈیا کے مختلف پلیٹ فارمز جیسے فیس بک، ٹویٹر اور واٹس ایپ پر ایک تصویر تیزی سے وائرل ہو رہی ہے۔ تصویر میں کچھ لوگوں کو دیکھا جا سکتا ہے، جن کے ہاتھ میں تلوار اور زعفرانی جھنڈا ہے۔ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ یہ تصویر جہانگیر پوری علاقے میں تشدد کے دوران لی گئی تھی۔

وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ ہماری تحقیقات میں وائرل دعویٰ جعلی نکلا۔ وائرل تصویر تقریباً ایک دہائی سے انٹرنیٹ پر موجود ہے۔ اس تصویر کا جہانگیر پوری کے علاقے میں ہونے والے واقعے سے کوئی تعلق نہیں۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک صارف نریندر چودھری نے 19 اپریل کو ایک تصویر اپ لوڈ کرتے ہوئے دعویٰ کیا: ‘یہ دہلی کے جہانگیر پوری میں نکالے گئے جلوس کی تصویر ہے۔ آپ ان نوجوانوں کے چہروں کو دیکھیں اور ان کی عمر کا اندازہ لگائیں۔ یہ پڑھنے لکھنے کی عمر ہے یا ملازمت کی عمر۔ لیکن ان کے ہاتھوں میں ہتھیار ہیں۔ آخر نفرت کرنے والے ملک کے مستقبل کو کہاں لے جانا چاہتے ہیں، تصویروں سے صاف نظر آرہا ہے۔

پوسٹ کے آرکائیو ورژن کو یہاں دیکھیں۔

پڑتال

وشواس نیوز نے وائرل تصویر کی حقیقت جاننے کے لیے سب سے پہلے گوگل ریورس امیج ٹول کی مدد سے اسے سرچ کیا۔ جہاں ہمیں تصویر سے متعلق کئی رپورٹس ملی ہیں۔ ایشیا نیوز ویب سائٹ پر 29 اپریل 2010 کو شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق، یہ تصویر کرناٹک کی ہے، جہاں بجرنگ دل کے کارکنوں نے عیسائیوں پر حملہ کیا۔ رپورٹ میں ملزمان کی گرفتاری کی بات بھی کی گئی۔ مکمل خبر یہاں پڑھیں۔

یہ تصویر مقبوضہ کشمیر نامی مقامی ویب سائٹ پر بھی اپ لوڈ کی ہوئی ملی۔ 15 اگست 2013 کو شائع ہونے والی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ یہ تصویر جموں کے کشتواڑ علاقے میں تشدد کی تھی۔ رپورٹ میں وائرل ہونے والی تصویر کے ساتھ کیپشن میں لکھا ہے، ’’مسلم مخالف فسادات کے دوران، تلواروں سے لیس جموں ہندوستانی ہندو بنیاد پرستوں نے پکڑ لیا‘‘۔ مکمل خبر یہاں پڑھیں۔

اب تک کی تحقیقات میں پتہ چلا ہے کہ یہ تصویر انٹرنیٹ پر جموں و کشمیر، کرناٹک کے نام سے پچھلے کئی سالوں سے وائرل ہے۔ اب اسے جہانگیرپوری تشدد کے نام سے وائرل کیا جا رہا ہے۔ وشواس نیوز آزادانہ طور پر اس بات کی تصدیق نہیں کرتا ہے کہ یہ تصویر کہاں لی گئی ہے، لیکن 2010 سے یہ تصویر انٹرنیٹ پر موجود ہے۔

وشواس نیوز نے تحقیقات کے اگلے مرحلے میں دہلی کے جہانگیر پوری کے دینک جاگرن کے کرائم رپورٹر دھننجے سے رابطہ کیا۔ انہوں نے ہمیں بتایا، وائرل تصویر اس واقعے کی نہیں ہے جو جہانگیر پوری علاقے میں تشدد کے دوران ہوا تھا۔ وائرل ہونے والا دعویٰ غلط ہے۔

تحقیقات کے اختتام پر وشواس نیوز نے جھوٹے دعوے کے ساتھ تصویر کو وائرل کرنے والے صارف کی اسکیننگ کی۔ فیس بک صارف نریندر چودھری یمنا نگر، ہریانہ میں رہتے ہیں۔ فیس بک پر اس کے 4.9 ہزار سے زیادہ دوست ہیں۔ صارف کا تعلق سیاسی جماعت سے ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی جانچ کی۔ ہماری تحقیقات میں وائرل دعویٰ جعلی نکلا۔ وائرل تصویر تقریباً ایک دہائی سے انٹرنیٹ پر موجود ہے۔ اس تصویر کا جہانگیر پوری کے علاقے میں ہونے والے واقعے سے کوئی تعلق نہیں۔

  • Claim Review : یہ دہلی کے جہانگیر پوری میں نکالے گئے جلوس کی تصویر ہے۔ آپ ان نوجوانوں کے چہروں کو دیکھیں اور ان کی عمر کا اندازہ لگائیں۔ یہ پڑھنے لکھنے کی عمر ہے یا ملازمت کی عمر۔ لیکن ان کے ہاتھوں میں ہتھیار ہیں۔ آخر نفرت کرنے والے ملک کے مستقبل کو کہاں لے جانا چاہتے ہیں،
  • Claimed By : نریندر چودھری
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later