X

فیکٹ چیک: کاشی وشواناتھ کاریڈور میں مسلمانوں کے گھروں میں 45 مندر ملنے والی پوسٹ فرضی ہے

  • By Vishvas News
  • Updated: May 28, 2020

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ وزیر اعظم نریندر مودی کے پارلیمانی حلقہ وارانسی میں کاشی وشوا ناتھ کاریڈور پروجیکٹ کا کام زوروں شوروں سے چل رہا ہے، لیکن کچھ لوگ پروجیکٹ کو لےکر فرضی خبروں کو اڑانے سے باز نہیں آرہے ہیں۔ جیسے کچھ لوگ اب سوشل میڈڈیایا پر یہ جھوٹ پھیلا رہے ہیں پروجیکٹ بنانے کے لئے جب 80 مسلمانوں کے گھروں کو خرید کر توڑا گیا تو اس میں 45 مندر پائے گئے۔

وشواس نیوز کی تحقیقات میں، یہ دعوی فرضی نکلا۔ کچھ لوگ معاشرے میں زہر پھیلانے کے لئے اس غلط فرقہ وارانہ پیغام کو وائرل کررہے ہیں۔ تفتیش میں انکشاف ہوا ہے کہ اب تک 307 مکانات خریدے جاچکے ہیں۔ اس میں ایک بھی مکان بھی کسی مسلمان کا نہیں ہے۔

کیا ہو رہا ہے وائرل؟

فیس بک صارف ’ہرش پنڈت‘ نے ایک ویڈیو کو شیئر کرتے ہوئے لکھا،’’کاشی وشوناتھ مندر سے گنگا تک سڑک کی چوڑائی بڑھانے کے لئے ، مودی جی نے سڑک میں آنے والے 80 مسلمانوں کے مکان خریدنا شروع کردیئے۔ جب یہ مکانات منہدم ہوگئے تو اس میں 45 پرانے مندر پائے گئے۔ جب اورنگ زیب نے اصل کاشی وشوناتھ مندر کو گیاناوپی مسجد میں تبدیل کیا تو اس نے اپنے کچھ فوجیوں کو مسجد کے آس پاس رہنے کی جگہ دی اور قریب ہی چھوٹے چھوٹے مندروں پر قبضہ کرلیا اور ان مندروں پر اپنے مکانات تعمیر کروائے۔ ابھی وزیر اعظم مودی نے اس مغل فوج کے تمام تجاوزات کاروں کے گھروں کو ہٹا دیا ہے اور دیکھتے ہیں کہ دنیا کو کیا ملا ہے ……. 45 قدیم مندروں کے خزانے…. کی دونوں ویڈیوز دیکھیں

پڑتال

‘کاشی وشوناتھ کاریڈور منصوبے’ کی حقیقت جاننے کے لئے ، ہم نے شری کاشی وشوناتھ مندر کے چیف ایگزیکٹو وشال سنگھ سے بات کی۔ انہوں نے وشواس نیوز کو بتایا کہ وائرل پوسٹ مکمل طور پر فرضی ہے۔ جس جگہ پروجیکٹ تعمیر ہورہا ہے ، وہاں کسی بھی مسلمان کا ایک مکان نہیں تھا۔ اب تک ، اس منصوبے کے لئے 350 کروڑ روپے کی لاگت سے 307 مکانات خریدے جا چکے ہیں۔ گھروں کے اندر سے 44 مندر نکلے ہیں۔

اس کے بعد ، وشواس نیوز نے اس فہرست پر تحقیق کرنا شروع کی ، جس میں ان لوگوں کے نام اور مقداریں تھیں جن کے مکانات خریدے گئے تھے۔ ہمیں اس فہرست میں ایک بھی شخص نہیں ملا جو مسلمان ہو۔

تحقیقات کے اگلے مرحلے میں ، ہم نے وائرل پوسٹ کے ساتھ اپلوڈ کردہ ویڈیوکی جانچ کی۔ ہمیں معلوم ہوا کہ یہ ویڈیو کاشی راہداری منصوبے میں موجود علاقے سے متعلق ہیں۔ یہ ویڈیو 2019 سے سوشل میڈیا پر دموجود ہے۔ ہمیں ان ویڈیوز میں کہیں بھی مسلمان گھروں کا کوئی ثبوت نہیں ملا۔

اب باری تھی اس پوسٹ کو فرضی دعوی کے ساتھ وائرل کرنے والے فیس بک صارف ’ہرش پنڈت‘ کی سوشل اسکینگ کرنے کی۔ ہم نے پایا کہ اس پروفائل سے ایک مخصوص آئڈیولاجی کی جانب متوجہ پوسٹ کو شیئر کیا جاتا ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز کی جانچ میں پتہ چلا، ’کاشی میں 80 مسلمانوں کا گھر توڑنے کے بعد مند‘ ملنےوالی پوسٹ جھوٹی نکلی۔

  • Claim Review : دعوی کیا جا رہا ہے کہ بنارس میں مسلماوں کے گھروں میں مندر ملے ہیں۔
  • Claimed By : FB User- Harsh Pandit
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
    فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Post saved! You can read it later