X

فیکٹ چیک: پاکستان کے خلاف نعرے لگوانے کا یہ ویڈیو یو پی کا نہیں ہے، چار سال سے ہے انٹرنیٹ پر وائرل

وشواس نیوز نے وائرل ویڈیو کی جانچ کی۔ معلوم ہوا کہ جو ویڈیو یوپی کا وائرل ہوا ہے، وہ جموں و کشمیر کے نام سے کئی سال پہلے وائرل ہو چکا ہے۔ یہ ویڈیو 2017 سے انٹرنیٹ پر وائرل ہے۔ ہماری تحقیقات میں وائرل پوسٹ فرضی نکلی۔

  • By Vishvas News
  • Updated: October 31, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ پاکستان کی جیت کے بعد سے سوشل میڈیا پر کئی جعلی ویڈیوز اور تصاویر وائرل ہو رہی ہیں۔ اب ایک ویڈیو وائرل کرتے ہوئے صارفین اسے یوپی کا بتاتے ہوئے دعوی کر رہے ہیں کہ پاکستان زندہ باد کے نعرہ لگانے والوں کی یو ی پولیس نے جم کر پٹائی کی۔ وشواس نیوز نے وائرل ویڈیو کی جانچ کی۔ معلوم ہوا کہ جو ویڈیو یوپی کا وائرل ہوا ہے، وہ جموں و کشمیر کے نام سے کئی سال پہلے وائرل ہو چکا ہے۔ یہ ویڈیو 2017 سے انٹرنیٹ پر وائرل ہے۔ ہماری تحقیقات میں وائرل پوسٹ فرضی نکلی۔

کیا ہو رہا ہے وائرل؟

فیس بک صارف سیما چودھری نے 29 اکتوبر کو اپنے اکاؤنٹ پر ایک ویڈیو اپ لوڈ کرتے ہوئے دعویٰ کیا: ‘فرضی دعویٰ: اسے اتر پردیش حکومت نے پاکستان زندہ باد کے نعرے لگانے پر پکڑا ہے اور ان کی زبردست پٹائی کی جا رہی ہے۔ انہیں حراست میں بھیجا گیا ہے۔ جئے وزیر اعلیٰ اتر پردیش، جئے یوگی بابا، جئے جئے شری رام!‘۔

پوسٹ کے آرکائیو ورژن کو یہاں دیکھیں۔

پڑتال

وشواس نیوز نے آن لائن ٹولز کے ساتھ جانچ شروع کی۔ سب سے پہلے، وائرل ویڈیو کو ان ویڈ ٹول پر اپ لوڈ کیا اور کئی گریبس نکالیں۔ پھر انہیں ینڈیکس سرچ انجن پر اپ لوڈ کرکے تلاش کرنا شروع کیا۔ سب سے پرانی ویڈیو جو ہمیں یوٹیوب پر ملی۔ 15 اپریل 2017 کو اس ویڈیو کو اپ لوڈ کرتے ہوئے بتایا گیا کہ بھارتی فوج نے کشمیری لڑکوں کو ‘پاکستان مردہ باد’ کے نعرے لگانے پر مجبور کیا۔ متعلقہ ویڈیو یہاں کلک کر کے دیکھی جا سکتی ہے۔

چار سال قبل یوٹیوب پر اپ لوڈ کی گئی اس ویڈیو سے ایک بات واضح ہوگئی کہ اس کا چند روز قبل بھارت اور پاکستان کے درمیان ہونے والے میچ اور پاکستان کی جیت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اسی طرح اس ویڈیو کا یوپی سے کوئی تعلق سمجھ میں نہیں آیا۔

دوسرے پلیٹ فارمز پر ویڈیو کی تلاش جاری کرتے ہوئے تفتیش آگے بڑھائی۔ اصل ویڈیو آل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین میر واعظ عمر فاروق کے ٹوئٹر ہینڈل پر بھی پائی گئی۔ یہ 15 اپریل 2017 کو پوسٹ کیا گیا تھا۔ اسے یہاں کلک کر کے دیکھا جا سکتا ہے۔

سرچ کے دوران ہمیں وائرل ویڈیو کچھ پرانی خبروں میں بھی ملا۔ اسکوپ ہوپ کی ویب سائٹ پر 15 اپریل 2017 کو شائع ہونے والے ایک خبر میں بھی اسی ویڈیو کا استعمال کیا گیا ہے جس کی وضاحت کشمیر کی ہے۔ خبر یہاں کلک کر کے پڑھی جا سکتی ہے۔

وشواس نیوز آزادانہ طور پر اس ویڈیو کی تصدیق نہیں کرتا ہے۔ لیکن ایک بات کی تصدیق ہوتی ہے کہ ویڈیو کم از کم چار سال پرانی ہے۔ یہ 2017 سے انٹرنیٹ پر وائرل ہے۔

اہم بات یہ ہے کہ ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں بھارت کی شکست کے بعد ملک کے کئی حصوں میں پاکستان کی حمایت کے واقعات سامنے آئے۔ جس کے بعد پولیس نے مقدمہ درج کر لیا ہے۔ اس حوالے سے ایک خبر آج تک کی ویب سائٹ پر 28 اکتوبر کو شائع ہوئی تھی۔ یہ خبر یہاں کلک کر کے پڑھی جا سکتی ہے۔

تحقیقات کو جاری رکھتے ہوئے، وشواس نیوز نے کشمیر کے دینک جاگرن کے سینئر صحافی نوین نواز سے رابطہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ وائرل ویڈیو کا پاکستان کی جیت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ یہ ویڈیو کئی سالوں سے انٹرنیٹ میڈیا میں وائرل ہے۔

جانچ کے اختتام پر وشواس نیوز نے فرضی پوسٹ کرنے والے صارف سے تفتیش کی۔ فیس بک صارف سیما چودھری دہلی میں رہتی ہیں۔ اس کے اکاؤنٹ کو چھ ہزار سے زیادہ لوگ فالو کرتے ہیں۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے وائرل ویڈیو کی جانچ کی۔ معلوم ہوا کہ جو ویڈیو یوپی کا وائرل ہوا ہے، وہ جموں و کشمیر کے نام سے کئی سال پہلے وائرل ہو چکا ہے۔ یہ ویڈیو 2017 سے انٹرنیٹ پر وائرل ہے۔ ہماری تحقیقات میں وائرل پوسٹ فرضی نکلی۔

  • Claim Review : اسے اتر پردیش حکومت نے پاکستان زندہ باد کے نعرے لگانے پر پکڑا ہے اور ان کی زبردست پٹائی کی جا رہی ہے۔ انہیں حراست میں بھیجا گیا ہے۔ جئے وزیر اعلیٰ اتر پردیش، جئے یوگی بابا، جئے جئے شری رام!
  • Claimed By : سیما
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later