X

فیکٹ چیک: بنگلہ دیش میں تشدد کی بتا کر کی جا رہی ہے مغربی بنگال کے اسکان مندر کی پرانی تصویر وائرل

وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی چھان بین کرتے ہوئے پایا کہ یہ دعویٰ گمراہ کن ہے۔ جو تصویر وائرل ہو رہی ہے وہ بنگلہ دیش کی نہیں بلکہ مغربی بنگال کی پرانی فوٹو ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: October 30, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ بنگلہ دیش میں ہندوؤں کے خلاف فرقہ وارانہ تشدد کے معاملے سے متعلق کئی خبریں وائرل ہونے لگی ہیں۔ اسی ظمن میں ایک تصویر وائرل ہو رہی ہے، جس میں ایک پجاری کو کچھ مسلمانوں کو افطاری کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ اب اس پوسٹ کو شیئر کرتے ہوئے صارفین دعویٰ کر رہے ہیں کہ سوامی نیتائی داس جی کو بنگلہ دیش کے اسکان مندر میں ہوئے تشدد میں قتل کر دیا گیا ہے۔ وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی چھان بین کرتے ہوئے پایا کہ یہ دعویٰ گمراہ کن ہے۔ جو تصویر وائرل ہو رہی ہے وہ بنگلہ دیش کی نہیں بلکہ مغربی بنگال کی پرانی فوٹو ہے۔

کیا ہےوائرل پوسٹ میں؟

فیس بک پیج نے وائرل تصویر اپ لوڈ کی اور لکھا، ’یہ اسکان مندر بنگلہ دیش کے سوامی نیتائی داس ہیں، رمضان میں افطاری کرتے ہیں…ہر سال وہ ہزاروں مسلمانوں کو خدا کا پرساد کھلاتے تھے اور ہر رمضان روزہ افطاری کروایا کرتے تھے۔ اسے بھی پانچ دن پہلے جہادیوں نے قتل کر دیا تھا اور مندر کے تمام مورتیاں توڑ دی تھیں اور مندر کو جلا دیا گیا تھا۔ کیا اسے “سانپ کو کھانا کھلانا” کہتے ہیں؟

پوسٹ کا محفوظ شدہ ورژن دیکھیں  یہاں۔

پڑتال

اپنی تحقیقات شروع کرنے کے لیے، ہم نے پہلے گوگل ریورس امیج کا استعمال کرتے ہوئے وائرل امیج کو تلاش کیا۔ اس تلاش میں ہمیں یو سی اے نیوز نامی ویب سائٹ کا لنک ملا۔ یہاں خبر میں وائرل تصویر دیکھی جا سکتی ہے۔ 4 جولائی 2016 کو شائع ہونے والی اس خبر میں دی گئی معلومات کے مطابق انٹرنیشنل سوسائٹی فار کرشنا کانشائسنس کے ایک سادھو نے 22 جون کو مایا پور میں ہندو گروپ کے مندر میں افطار کے دوران مسلمانوں کو مٹھائی کھلائی۔” خبر میں مزید کہا گیا ہے کہ “مسلمانوں نے صرف کولکتہ سے تقریباً 130 کلومیٹر شمال میں مایا پور میں چندرودیا مندر کے احاطے میں شام کی نماز ادا کی۔” پوری خبر یہاں دیکھیں۔

اب تک کی تحقیقات سے یہ ثابت ہوا کہ یہ تصویر مغربی بنگال کی ہے اور اس کا بنگلہ دیش میں اسکان مندر میں ہونے والے تشدد سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

ٹویٹر ایڈوانس سرچ پر 15 اکتوبر 2021 کو اسکان کے آفیشیئل ٹویٹر ہینڈل پر کی گئی ایک ٹویٹ میں بنگلہ دیش کے نواکھلی میں اسکون مندر پر حملے سے متعلق معلومات دی گئی ہیں۔

نیوز سرچ میں ہمیں اسکان کی ویب سائٹ پر اسی معاملے سے متعلق ایک خبر بھی ملی۔ اس میں دی گئی معلومات کے مطابق، ‘اسکون سری سری رادھا کرشنا، چومونی میں واقع گور نتیا نند جیو مندر پر حملہ کیا گیا اور دو عقیدت مندوں، پرنت چندر داس (جن کی لاش اگلے دن ایک تالاب میں ملی) اور جتن چندر ساہا کو ہلاک کر دیا گیا ان حملوں کے دوران۔ ایک اور عقیدت مند نیمائی چندر داس تشویشناک حالت میں اسپتال میں داخل ہے۔ تمام رہائشی عقیدت مندوں پر جسمانی حملہ کیا گیا اور وہ زخمی ہوئے ہیں۔

وشواس نیوز نے تصدیق کے لیے بنگلہ دیش کے اخبار نیوز ایج بی ڈی کے صحافی متھن صادق رحمان سے رابطہ کیا اور ان کے ساتھ وائرل پوسٹ شیئر کی۔ انہوں نے ہمیں بتایا کہ اس تشدد میں اسکون کے دو عقیدت مندوں کی موت ہو گئی ہے۔ ان میں سے ایک صوبے میں چندر ساہا کی موت نواکھلی میں اپنے ایک رشتہ دار کے گھر جاتے ہوئے ہوئی۔ اس کا آبائی شہر کمیلا کا پڑوسی ضلع تھا۔ لیکن جس کی موت ہوئی وہ سادھو نہیں تھا‘۔

ہم نے وائرل پوسٹ کے حوالے سے تصدیق کے لیے بوم کے بنگلہ دیش کے فیکٹ چیکر شعیب عبداللہ سے بھی رابطہ کیا اور اس وائرل پوسٹ کو ٹوئٹر کے ذریعے شیئر کیا۔ انہوں نے ہمیں بتایا، ‘نوآکھلی کے اس واقعے میں دو عقیدت مند (بھکشو نہیں) مارے گئے، پرنت چندر داس (26) اور جتن چندر ساہا (42)۔ اس کی تصدیق مختلف ذرائع اور مقامی صحافیوں نے کی ہے۔

تصدیق کے لیے ہم نے ای میل کے ذریعے اسکان سے بھی رابطہ کیا ہے۔ جواب ملتے ہی خبر کو اپ ڈیٹ کر دیا جائے گا۔

گمراہ کن پوسٹ شیئر کرنے والے فیس بک پیج کی سوشل اسکیننگ میں ہم نے پایا کہ اس پیج کو 4,945 لوگ فالو کر رہے ہیں۔ اس کے علاوہ یہ پیج 23 جون 2017 کو بنایا گیا ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز نے وائرل پوسٹ کی چھان بین کرتے ہوئے پایا کہ یہ دعویٰ گمراہ کن ہے۔ جو تصویر وائرل ہو رہی ہے وہ بنگلہ دیش کی نہیں بلکہ مغربی بنگال کی پرانی فوٹو ہے۔

  • Claim Review : یہ اسکان مندر بنگلہ دیش کے سوامی نیتائی داس ہیں، رمضان میں افطاری کرتے ہیں…ہر سال وہ ہزاروں مسلمانوں کو خدا کا پرساد کھلاتے تھے اور ہر رمضان روزہ افطاری کروایا کرتے تھے۔ اسے بھی پانچ دن پہلے جہادیوں نے قتل کر دیا تھا اور مندر کے تمام مورتیاں توڑ دی تھیں اور مندر کو جلا دیا گیا تھا
  • Claimed By : پردھان منتری
  • Fact Check : گمراہ کن
گمراہ کن
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later