X

فیکٹ چیک: نینی تال میں مسلمانوں کی بڑھتی آبادی کے دعوی کے ساتھ تصویر بنگلہ دیش کی ہے

ہماری تحقیقات میں یہ دعویٰ گمراہ کن اور فرقہ وارانہ نکلا۔ نینی تال میں مسلمانوں کی بڑھتی ہوئی آبادی کے دعوے کے ساتھ وائرل ہونے والی تصویر بھارت کی نہیں بلکہ بنگلہ دیش کی ہے ، جسے نینی تال کے غلط دعوے کے ساتھ شیئر کیا جا رہا ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: June 11, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر ایک وائرل پوسٹ میں دو تصویروں کا کولیج شیئر کیا جا رہا ہے، اس دعوے کے ساتھ کہ اس میں پہلی تصویر 2010 میں نینی تال کی ہے، جبکہ دوسری تصویر 2022 کی ہے، جو کہ شہر میں مسلمانوں کی بڑھتی ہوئی آبادی کو ظاہر کرتی ہے۔ ہماری تحقیقات میں یہ دعویٰ گمراہ کن اور فرقہ وارانہ نکلا۔ نینی تال میں مسلمانوں کی بڑھتی ہوئی آبادی کے دعوے کے ساتھ وائرل ہونے والی تصویر بھارت کی نہیں بلکہ بنگلہ دیش کی ہے ، جسے نینی تال کے غلط دعوے کے ساتھ شیئر کیا جا رہا ہے۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

وائرل کولاج (آرکائیو لنک) کو شیئر کرتے ہوئے، فیس بک صارف ‘راہل تیواری’ نے اس میں شامل دونوں تصاویر کو نینی تال کا بتاتے ہوئے شیئر کیا ہے۔ کئی دوسرے صارفین نے اس تصویر کو اسی طرح کے دعووں کے ساتھ شیئر کیا ہے۔

پڑتال

وائرل کولاج میں دو تصویریں استعمال کی گئی ہیں جن میں سے دوسری تصویر 2022 کے نینی تال کی بتائی جاتی ہے۔ اس تصویر میں مسلمانوں کی ایک بڑی تعداد کو ایک جگہ پر جمع ہوتے اور نماز پڑھتے دیکھا جا سکتا ہے۔ رورس امیج کے ذریعہ تصویر کی تلاش میں یہ تصویر 24 جون 2018 کو شائع ہونے والی الجزیرہ کی رپورٹ میں ملی۔ رپورٹ میں دی گئی معلومات کے مطابق یہ تصویر بنگلہ دیش کی ہے۔

غازی پور ، بنگلہ دیش ڈیٹ لائن کے ساتھ لکھی گئی رپورٹ کے مطابق ، یہ تصویر سالانہ وشوا اجتیما کی ہے ، جب ڈھاکہ سے تقریبا 35 کلومیٹر دور دریائے ترگ کے کنارے شہر میں مسلمانوں کی ایک بڑی تعداد نے نماز ادا کی۔

اس معاملہ سے متعلق دیگر تصاویر بھی رپورٹ میں شیئر کی گئی ہیں، یہ سب بنگلہ دیش کی ہیں۔ یہ واضح ہے کہ یہ تصویر 2018 میں شائع ہونے والی رپورٹ میں ہے، جبکہ وائرل کولاج میں اسے 2022 بیان کیا گیا ہے۔

نیز یہ تصویر بنگلہ دیش کی ہے نینی تال کی نہیں۔

کولاج کی پہلی تصویر نینی تال کی بتائی جاتی ہے جو کہ درست ہے۔ ریورس امیج سرچ میں ، یہ تصویر کئی رپورٹس میں پائی گئی ، جس میں اسے نینی تال کے اپر مال روڈ کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ یہ تصویر پر نینیتال کے نام پر بھی موجود ہے۔

ہمارے ساتھی دینک جاگرن کے نینی تال کے صحافی کشور جوشی نے تصدیق کی، ’’وائرل کولاج کی پہلی تصویر نینی تال کے مال روڈ کی ہے‘‘۔

نتیجہ: ہماری تحقیقات میں یہ دعویٰ گمراہ کن اور فرقہ وارانہ نکلا۔ نینی تال میں مسلمانوں کی بڑھتی ہوئی آبادی کے دعوے کے ساتھ وائرل ہونے والی تصویر بھارت کی نہیں بلکہ بنگلہ دیش کی ہے ، جسے نینی تال کے غلط دعوے کے ساتھ شیئر کیا جا رہا ہے۔

  • Claim Review : دونوں تصاویر کو نینی تال کا بتاتے ہوئے شیئر کیا ہے۔
  • Claimed By : راہل تیواری
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later