X

فیکٹ چیک: چتوڑ گڑھ کے مندر کی تصویر کو مسجد بتا کر کیا جا رہا غلط دعوی

وشواس نیوز کی تحقیقات میں یہ دعویٰ گمراہ کن نکلا۔ وائرل ہونے والی ویڈیو میں نظر آنے والا ڈھانچہ خود مندر ہے۔ یہ راجستھان کے چتوڑ گڑھ قلعہ میں موجود شرنگار چوڑی مندر ہے۔ مندر کا بالائی حصہ سرکلر گنبد کی طرح لگتا ہے ، لیکن یہ کسی مندر کو مسمار کرنے اور مسجد بنانے کا معاملہ نہیں ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: June 3, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ایک ویڈیو میں ایک مندر جیسا ڈھانچہ نظر آرہا ہے ، جس کے اوپر گنبد نما شکل دکھائی دے رہی ہے۔ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ ویڈیو میں نظر آنے والا ڈھانچہ نیچے سے مندر اور اوپر سے مسجد ہے۔

وشواس نیوز کی تحقیقات میں یہ دعویٰ گمراہ کن نکلا۔ وائرل ہونے والی ویڈیو میں نظر آنے والا ڈھانچہ خود مندر ہے۔ یہ راجستھان کے چتوڑ گڑھ قلعہ میں موجود شرنگار چوڑی مندر ہے۔ مندر کا بالائی حصہ سرکلر گنبد کی طرح لگتا ہے ، لیکن یہ کسی مندر کو مسمار کرنے اور مسجد بنانے کا معاملہ نہیں ہے۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

وائرل ویڈیو (آرکائیو لنک) کو شیئر کرتے ہوئے فیس بک صارف ‘سریتا کماری مالی’ نے لکھا ، “نیچے سے مندر تک مسجد یہ گنگا جمونی تہزیب ہے۔۔یہی وجہ ہے کہ مذہبی لوگ مسجد کے سروے پر پریشان ہیں، ذرا محسوس کریں کہ ہندوؤں نے مندروں کی تباہی کی وجہ سے کتنا درد محسوس کیا ہوگا‘‘۔

جھوٹے دعوے کے ساتھ وائرل تصویر مختلف سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر شیئر کی جا رہی ہے۔

پڑتال

گوگل ریورس امیج سرچ میں یہ تصویر تھنکنگ پارٹیکل ڈاٹ کام کی ویب سائٹ پر ملی۔ رپورٹ میں دی گئی معلومات کے مطابق ، یہ راجستھان کے چتوڑ گڑھ قلعہ کے اندر موجود شرنگار چوڑی مندر ہے ، جسے ویلاکا نے 1448 عیسوی میں تعمیر کیا تھا۔

اس مندر کی بڑی تصویر کامنس ویکی میڈیا ڈاٹ او آر جی پر بڑے طول و عرض میں دیکھی جا سکتی ہے۔ یہ تصویر فوٹو ایجنسی الامی اٹ کام کی ویب سائٹ پر ایک بڑے فریم میں بھی دیکھی جا سکتی ہے۔ دی گئی معلومات کے مطابق یہ تصویر ایک پرانے ہندو مندر کی ہے ، جس کا اوپری حصہ گنبد کی شکل میں ہے اور یہ راجستھان کے چتوڑ گڑھ میں واقع ہے۔

آئی جی این سی اے کی سرکاری ویب سائٹ پر اس مندر کی کئی دوسری تصاویر اور اس کے ساتھ دی گئی تفصیل بھی پائی گئی۔ ایک تصویر کے ساتھ دی گئی معلومات کے مطابق ، ‘مندر کا مغربی دروازہ ، ستون کے نوشتہ کے مطابق ، اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ کولا مہارانا کمبھا کے خزانچی تھے۔ کولا کے بیٹے ویلکا نے یہ مندر 1449 میں بنایا اور جن ساگر سوری نے اس مندر میں اپنی جان دے دی۔ بعد میں بنبیر نے اس مندر کو ایک بڑی دیوار سے بند کر دیا۔ اب یہ مندر کھلا ہے۔

وائرل تصویر کے حوالے سے ، ہمارے ساتھی نئی دنیا کے ادے پور کے صحافی سبھاش شرما نے سینٹرل آرکولوجی ، چٹوڑ درگ کے ماہر وویک وشنو سے رابطہ کیا۔ وشنو نے کہا، ‘مسلمان حکمرانوں سے مندروں کی حفاظت کے لیے شیکھروں کو ایسی شکل دی گئی تاکہ وہ محفوظ رہے۔ قلعہ چتوڑ کے مندر میں بھی ایسا ہی کیا گیا‘۔

بعد میں اس ڈھانچے میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی، جس کی وجہ سے ایک وہم ہے کہ مندر کو مسمار کرنے کے بعد مسجد تعمیر کی گئی تھی۔ سبھاش شرما نے یہ بھی تصدیق کی کہ چتور گڑھ قلعہ کمپلیکس میں کوئی مسجد موجود نہیں ہے اور وائرل ہونے والی تصویر مندر کی ہے ، جس کا اوپری حصہ گنبد کی شکل میں ہے۔

نتیجہ: راجستھان کے چتور گڑھ قلعہ کمپلیکس میں واقع شرنگار چوڑی مندر کی تصویر مسجد ہونے کے دعوے کے ساتھ وائرل ہو رہی ہے۔ اس مندر کا بالائی حصہ گنبد کی شکل میں ہے ، لیکن یہ مسجد نہیں ہے۔

نتیجہ: وشواس نیوز کی تحقیقات میں یہ دعویٰ گمراہ کن نکلا۔ وائرل ہونے والی ویڈیو میں نظر آنے والا ڈھانچہ خود مندر ہے۔ یہ راجستھان کے چتوڑ گڑھ قلعہ میں موجود شرنگار چوڑی مندر ہے۔ مندر کا بالائی حصہ سرکلر گنبد کی طرح لگتا ہے ، لیکن یہ کسی مندر کو مسمار کرنے اور مسجد بنانے کا معاملہ نہیں ہے۔

  • Claim Review : نیچے سے مندر تک مسجد یہ گنگا جمونی تہزیب ہے۔۔یہی وجہ ہے کہ مذہبی لوگ مسجد کے سروے پر پریشان ہیں، ذرا محسوس کریں کہ ہندوؤں نے مندروں کی تباہی کی وجہ سے کتنا درد محسوس کیا ہوگا
  • Claimed By : Sarita Kumari Mali
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later