X

فیکٹ چیک: اترپردیش کے مختلف اضلع میں آگ لگنے کے واقعات کی پرانی تصاویر کو تریپورہ کے نام پر فرقہ وارانہ دعوی کے ساتھ کیا جا رہا وائرل

ہماری تحقیقات میں یہ دعویٰ جھوٹا اور فرقہ وارانہ نکلا۔ وائرل ہونے والی دونوں تصویریں اتر پردیش کے دو مختلف واقعات سے متعلق ہیں، جو تریپورہ کو جوڑنے والے فرقہ وارانہ دعوے کے ساتھ وائرل ہو رہے ہیں۔

  • By Vishvas News
  • Updated: November 7, 2021

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ تریپورہ میں فرقہ وارانہ تشدد کے بعد سے سوشل میڈیا پر ایسی تصویریں لگاتار شیئر کی جارہی ہیں جن کا تریپورہ کے کسی بھی واقعے سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ ان تصاویر کو شیئر کرنے کا مقصد فرقہ وارانہ کشیدگی اور دشمنی کو ہوا دینا ہے۔ اس تناظر میں دو تصویریں وائرل ہو رہی ہیں جس میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ اس کا تعلق تریپورہ میں آتشزدگی کے واقعہ سے ہے، جس میں مسلمانوں کی دکانوں کو آگ لگا دی گئی تھی۔

ہماری تحقیقات میں یہ دعویٰ جھوٹا اور فرقہ وارانہ نکلا۔ وائرل ہونے والی دونوں تصویریں اتر پردیش کے دو مختلف واقعات سے متعلق ہیں، جنہیں تریپورہ کے فرضی اور فرقہ وارانہ دعوے کے ساتھ وائرل کیا جا رہا ہے۔

وائرل پوسٹ میں کیا ہے؟

وائرل تصویر (آرکائیو لنک) کو شیئر کرتے ہوئے، فیس بک صارف ‘محمد بلال’ نے لکھا، “عامر حسین کی الیکٹرک سامان کی دکان اور رووا پانیساگر، تریپورہ میں امیل الدین کی پینٹ اور گروسری کی دکان کو آگ لگا دی گئی۔ دونوں کو 12-15 لاکھ روپے کا نقصان ہوا ہے۔ الزام ہے کہ یہ سب پولیس کی موجودگی میں ہوا۔ ابھی تک کوئی گرفتاری نہیں ہوئی ہے۔”

مختلف سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر کئی دیگر صارفین نے ان تصاویر کو ایک جیسے اور ایک جیسے دعووں کے ساتھ شیئر کیا ہے۔ ٹوئٹر پر کئی دیگر صارفین نے بھی ان تصاویر کو اسی دعوے کے ساتھ شیئر کیا ہے۔

پڑتال

وائرل پوسٹ میں دو تصویریں استعمال کی گئی ہیں، اس لیے ہم نے ان تصویروں کو باری باری سرچ کیا۔

پہلی تصویر

گوگل پر ریورس امیج سرچ کرنے سے، ہمیں یہ تصویر 12 مئی 2016 کو آئی نیکسٹ لائو ڈاٹ کام کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والی رپورٹ میں ملی۔ دی گئی معلومات کے مطابق، آگ لگنے کے واقعہ کی یہ تصویر گورکھپور کے نوین گلہ منڈی کے گودام میں لگی آگ کی ہے۔

رپورٹ کے مطابق نوین گلہ منڈی کے گودام میں منگل کی رات لگی آگ بدھ کو بھی پوری طرح سے نہیں بجھا سکی۔ جگہ جگہ پڑے روئی کے ڈھیر اب بھی سلگ رہے تھے۔ فائر سروس کی ناکامی کے باعث آگ کو مکمل طور پر بجھایا نہیں جا سکا۔ جس کی وجہ سے دوسرے دن بھی گودام سے دھواں اٹھ رہا تھا۔ تاجروں کا کہنا ہے کہ منڈی انتظامیہ کی وجہ سے ایسے واقعات ہو رہے ہیں۔ جس کی وجہ سے تاجروں کو نقصان کا سامنا ہے۔ مارکیٹ کمیٹی کا کہنا ہے کہ آگ کھمبے کی کیبل اور ٹین شیڈ میں تار لگنے سے لگی ہے۔

دوسری تصویر

گوگل پر ریورس امیج سرچ کرنے پر، ہمیں یہ تصویر امر اجالا کی ویب سائٹ پر 2 جولائی 2019 کو شائع ہونے والی رپورٹ میں ملی۔ دی گئی معلومات کے مطابق یہ تصویر نوئیڈا میں واقع دو فیکٹریوں میں لگی زبردست آگ کی ہے۔

رپورٹ کے مطابق، ‘پیر کی دوپہر فیز ٹو میں واقع نوئیڈا اسپیشل اکنامک زون (این ایس ای زیڈ) میں پلاسٹک گرینول فیکٹری میں ایک بڑی آگ لگ گئی۔ ایک اور فیکٹری بھی آگ کی زد میں آ گئی۔ آگ سے پلاسٹک گرینول فیکٹری کے پورے حصے میں آگ لگ گئی جبکہ دوسری فیکٹری کو معمولی نقصان پہنچا۔ رات گئے تک 20 فائر ٹینڈر آگ پر قابو پانے کی کوشش کر رہے تھے۔ آگ میں کسی جانی نقصان یا پھنسے ہونے کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔ فی الحال آگ لگنے سے کروڑوں کا نقصان بتایا جا رہا ہے۔

ہماری تحقیقات سے یہ واضح ہے کہ جو تصویریں فرقہ وارانہ دعوے کے ساتھ گردش کر رہی ہیں کہ یہ تریپورہ کا واقعہ نہیں ہے، وہ ایک پرانے واقعے کی تصویریں ہیں جو اتر پردیش کے دو مختلف اضلاع میں پیش آیا تھا۔ ہم نے ان تصویروں کے سلسلے میں آئی نیکٹس لائیو کے ایڈیٹر میانک شکلا سے رابطہ کیا۔ انہوں نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ یہ تصویریں اتر پردیش کے مختلف واقعات سے متعلق ہیں۔

وائرل تصویر کو جھوٹے دعوے کے ساتھ شیئر کرنے والے صارف نے اپنے پروفائل میں خود کو بدایوں کا رہائشی بتایا ہے۔

اہم بات یہ ہے کہ تریپورہ میں فرقہ وارانہ تشدد کے بعد تریپورہ پولس کے آفیشل ٹویٹر ہینڈل سے جاری ایک ویڈیو اپیل میں لوگوں سے اپیل کی گئی ہے کہ وہ فیس بک اور ٹویٹر پر کسی قسم کی افواہیں نہ پھیلائیں۔ تاہم اس کے باوجود سوشل میڈیا پر گمراہ کن یا جھوٹے دعوؤں کے ساتھ ویڈیوز اور تصاویر شیئر کیے جانے کا رجحان کم نہیں ہوا۔

تریپورہ سے متعلق دیگر حقائق کی جانچ کی رپورٹ وشواس نیوز ویب سائٹ پر پڑھی جا سکتی ہے۔

نتیجہ: ہماری تحقیقات میں یہ دعویٰ جھوٹا اور فرقہ وارانہ نکلا۔ وائرل ہونے والی دونوں تصویریں اتر پردیش کے دو مختلف واقعات سے متعلق ہیں، جو تریپورہ کو جوڑنے والے فرقہ وارانہ دعوے کے ساتھ وائرل ہو رہے ہیں۔

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later