X

فیکٹ چیک: اے آئی ایم آئی ایم کے مقامی لیڈران نے نیپال کے پرچم کو جلایا، فرقہ وارنہ زاویہ سے وائرل ہو رہی پوسٹ

  • By Vishvas News
  • Updated: June 18, 2020

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ایک تصویر میں کچھ لوگوں کو ایک پرچم کو آگ کے حوالے کرتےہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ اس تصویر کو لے کر دعوی کیا جا رہا ہے کہ اتر پردیش کے پرتاپ گڑھ کے ضلع انچار سلیم انصاری نے بھگوا جھنڈے کو جلایا۔

وشواس نیوز کی پڑتال میں یہ دعوی غلط نکلا۔ نیپال کی پارلیمنٹ میں ہندوستانی علاقہ والے نقشہ کو پاس کئے جانے کی مخالفت میں سلیم انصاری کے ساتھ اے آئی ایم آئی ایم کے مقامی لیڈران نے پرتاپ گڑھ میں نیپالی جھنڈے کو جلاکر احتجاج درج کرایا تھا۔

کیا ہے وائرل پوسٹ میں؟

فیس بک صارف ’آدتیہ راج‘ نے ایک پوسٹ شیئر کرتے ہوئے لکھا، ’’یہ پرتاپ گڑھ کے اے آئی ایم آئی ایم کے ضلع انچار محمد سلیم انصاری ہیں، جوکہ سرے عام بھگوا جھنڈے کو جلا رہے ہیں‘‘۔

پڑتال

تصویر میں پرچم جلاتے ہوئے لوگوں کے پیچھے آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کا بینرل لگا ہوا ہے، جس پر ایک چھوٹا سا پوسٹر چپکایا ہوا ہے۔ اس پوسٹر پر ’نیپال مردہ آباد‘ صاف صاف لکھا ہوا نظر آرہا ہے۔

लाल घेरे में नेपाल मुर्दाबाद के नारे को साफ-साफ पढ़ा जा सकता है

اس کی ورڈ سے نیوز سرچ کرنے پر ہمیں ایک مقامی پورٹل ’نیشنل ٹائمس‘ پر لگی خبر ملی۔ اس کے مطابق، اے آئی ایم آئی ایم کے لیڈران نے نیپال کے جھنڈے کو جلا کر اپنی احتجاج درج کرایا۔ اس خبر میں یہ بھی بتایا گیا کہ نیپال کے پرچم کو جلائے جانے کے معاملہ کو کچھ لوگ فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوشش کر رہےہیں۔

معاملہ کی حقیقت جاننے کے لئے وشواس نیوز نے پرتاپ گڑھ پولیس سے رابطہ کیا۔ پرتاپ گڑھ کے ایڈیشنل سپرنٹنڈنٹ پولیس سریندر پی دریویدی نے وشواس نیوز کو بتایا، ’بھگوا جھنڈے کو آگ لگائے جانے کی بات غلط ہے۔ اے آئی ایم آئی ایم کے مقامی لیڈران نے نیپال کے جھنڈے کو جلایا تھا‘‘۔

پرتاپ گڑھ پولیس کی جانب سے اس معاملہ سرکاری وضاحت بھی جاری کی گئی ہے۔ ٹویٹر پر جاری بیان کے مطابق، ’مذکورہ کیس میں دکھائے جانے والا جھنڈا نیپال کے ملک سے ہے ، نیپال ملک کی پارلیمنٹ کے ذریعہ مبینہ ہندوستانی علاقے کو نیپالی سرزمین قرار دینے کے خلاف احتجاج میں نیپال کا پرچم اے آئی ایم آئی ایم پارٹی پرتاپگڑھ کے ممبروں نے جلایا تھا‘۔

وشواس نیوز نے اس کے بعد اے آئی ایم آئی ایم کی پرتاپ گڑھ ضلع یونٹ سے رابطہ کیا۔ ضلع انچارج محمد سلیم انصاری نے ہمیں بتایا، ’13 جون کو جب نیپال کی پارلیمنٹ نے ہندوستان کے علاقوں کو اپنا بتانے والا نقشہ پاس کیا، تب ہم نے مخالفت میں نیپال کے جھنڈے کو جلایا‘۔ نیپال ٹائمس کی خبر کے مطابق، ’13 جون کو ہی نیپال کی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں نے ہندوستان کے علاقہ والے نقشہ کو پاس کیا تھا۔

انصاری نے کہا ، “ہم نے گوگل کو دیکھ کر کپڑے پر نیپال کا جھنڈا بنایا اور اسے احتجاج میں جلایا۔ جب پرچم روشن کیا گیا تو پارٹی کے بینر پر نیپال مردہ آباد کا نعرہ واضح طور پر لکھا گیا تھا۔

انصاری نے کہا، ’بعد میں کچھ لوگوں نے پرچم کو رنگ کو لے کر معاملہ کو فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوشش کی۔ اس کے بعد ہم نے اگلے روز یعنی 14 جون کو بازار سے نیپال کا جھنڈا تیار کرایا اور احتجاج درج کرتے ہوئے پھر اسے آگ کے حوالے کر دیا‘۔ پرتاپ گڑھ پولیس نے اپنے ہینڈل سے جس تصویر کو شیئر کیا ہے، اس میں صاف صاف نیپال کے جھنڈے کو دیکھا جا سکتا ہے۔

Source-प्रतापगढ़ पुलिस का ट्विटर हैंडल

انہوں نے بتایا کہ اس کے بعد 16 تاریخ کو ہم نے مقامی انتظامیہ کو ایک میورنڈم بھی دیا، جس میں ہندوستان۔نیپال سرحد کو سیل کئے جانے کے ساتھ نیپال کے لوگوں کو بغیر ویزا کے ہندوستان میں داخل نہیں کئے جانے کا مطالبہ کیا ہے۔

نیپال احتجاج کو لے کر اے آئی ام آئی ایم کے مقامی لیڈران کی جانب سے دی گئی وضاحت

پرتاپ گڑھ پولیس نے اس معاملہ میں اے آئی ایم آئی ایم کے سابق ضلع صدر محمد اسرار کا ویڈیو بیان بھی جاری کیا ہے، جس میں انہیں یہ صاف کہتے ہوئے سنا جا سکتا ہے، ’نیپال کی پارلیمنٹ میں پاس کئے گئے ایک بل، جس میں ہندوستان کے کالا پانی کونیپال کے نقشہ میں دکھایا گیا ہے،کی مخالفت میں میں نے اپنے دفتر پر نیپال کا جھنڈا جلایا۔ اس جھنڈے کو جلانے کے پیچھے میرا مقصد کسی کے مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچانا نہیں ہے‘۔

یعنی اے آئی ایم ایم آئی ایم لیڈران کے ذریعہ بھگوا جھنڈے کو جلائے جانے کے دعوی کے ساتھ وائرل ہو رہی پوسٹ غلط ہے۔

اب باری تھی اس پوسٹ کو فرضی دعوی کے ساتھ وائرل کرنے والے فیس بک صارف آدتیہ راج کی سوشل اسکیننگ کرنے کی۔ ہم نے پایا کہ اس صارف کی جانب سے ایک مخصوص آئڈیولاجی کی جانب متوجہ پوسٹ کو شیئر کیا جاتا ہے۔

نتیجہ: نیپال کی پارلیمنٹ میں ہندوستانی علاقوں والے نقشہ کو منضوری دئے جانے کے بعد اترپردیش کے پرتاپ گڑھ میں اے آئی ایم آئی ایم کے لیڈران نے بھگوا جھنڈا نہیں، بلکہ نیپال کا جھنڈا جلا کر مخالفت درج کرائی تھی۔

  • Claim Review : اے آئی ایم آی ایم کے لیڈران نے جلایا بھگوا جھنڈا
  • Claimed By : fb user- Aditya Raj
  • Fact Check : جھوٹ‎
جھوٹ‎
    فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

جانیں سچی اور فرضی خبروں کی حقیقت کوئز کھیلیں اور خبروں کی حقیقت چیک کرنے کا طریقہ سیکھیں

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Post saved! You can read it later