X

فیکٹ چیک: اوڈیشہ کے چندیشور مندر اور اجمیر درگاہ کی تصویر گیانواپی مسجد کے نام پر وائرل

وارانسی کے گیانواپنی مسجد میں شیولنگ ملنے کے دعوی کے ساتھ وائرل ہو رہی ہے تصویر اوڈیشہ کے بالاسور واقع چندریشور مندر کی ہے۔ دوسرے جانب چشمہ ملنے کے دعوی کے ساتھ وائرل ہو رہی تصویر راجستھان کے اجمیر شریف درگاہ کی ہے۔

  • By Vishvas News
  • Updated: May 19, 2022

نئی دہلی (وشواس نیوز)۔ وارانسی کے گیانواپی میں سروے کا کام مکمل ہونے کے بعد سوشل میڈیا پر ایک تصویر اس دعوے کے ساتھ وائرل ہو رہی ہے کہ یہ سروے (کمیشن) کے دوران گیانواپی مسجد کے احاطے میں پائے گئے شیو لنگ کی ہے۔ اس کے ساتھ ہی کچھ صارفین ایک فوارے کی تصویر شیئر کرتے ہوئے دعویٰ کر رہے ہیں کہ سروے کے دوران جو کچھ ملا ہے وہ یہ چشمہ ہے نہ کہ شیولنگ۔

وشواس نیوز کی جانچ میں یہ دعویٰ غلط اور گمراہ کن نکلا۔ شیو لنگ کی تصویر جس کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ وہ گیانواپی مسجد کے احاطے میں واقع ہے، دراصل اوڈیشہ کے بالاسور ضلع میں واقع بھوسندیشور مندر کی ہے۔ اسی وقت، دوسری تصویر جس میں چشمہ نظر آرہا ہے، اس کا وارانسی کے گیانواپی کیمپس سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ یہ اجمیر شریف درگاہ میں موجود کوین میری حوز ہے جو وضو کے لیے استعمال ہوتی ہے۔

وائرل کیا وائرل پوسٹ میں؟

سوشل میڈیا صارف ‘ نے وائرل تصویر (آرکائیو لنک) شیئر کی اور اسے 12 فٹ لمبا شیولنگ بتایا جو گیانواپی مسجد کے احاطے میں ایک سروے کے دوران سامنے آیا۔

وارانسی کی گیانواپی مسجد میں سروے کے دوران شیولنگ کی تلاش کے دعوے کے ساتھ وائرل تصویر
اس کے ساتھ ہی کئی صارفین چشمے کی تصویر شیئر کرتے ہوئے دعویٰ کر رہے ہیں کہ سروے کے دوران گیانواپی کیمپس میں جو چیز ملی وہ شیو لنگ نہیں بلکہ ایک چشمہ ہے۔

پڑتال

پہلی تصویر

سوشل میڈیا پر گمراہ کن دعوے کے ساتھ وائرل تصویر ریورس امیج سرچ میں یہ تصویر کئی رپورٹس میں ملی۔ 20 فروری 2020 کو ڈلہی پلانیٹ کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں، اس تصویر کو اوڈیشہ کے بالاسور ضلع کے بھوگرائی گاؤں میں واقع بابا بھوسندیشور مندر میں موجود شیولنگ کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔


یہ تصویر اڈیشہ حکومت کی ویب سائٹ بیلیسور پر دیکھی جا سکتی ہے۔ دی گئی معلومات کے مطابق، یہ شمالی اوڈیشہ میں واقع بھگوان شیو کا ایک مشہور مندر ہے، جسے چندیشور مندر کے نام سے جانا جاتا ہے۔

واضح ہے کہ اس تصویر کا وارانسی کی گیانواپی مسجد سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اس شیولنگ کو یوٹیوب پر کئی ویڈیوز میں بھی دیکھا جا سکتا ہے۔

وائرل تصویر کے حوالے سے ہم نے پی ٹی آئی کے نمائندے اروند مشرا سے رابطہ کیا، جو بھونیشور میں موجود ہیں۔ “تصویر میں نظر آنے والا شیولنگ چندیشور مندر کا ہے، جو اڈیشہ کے بالاسور ضلع میں واقع ہے،” انہوں نے کہا۔

دوسری تصویر

ریورس امیج سرچ کرنے پر یہ تصویر کئی رپورٹس میں پائی گئی اور ان رپورٹس میں دی گئی معلومات کے مطابق یہ تصویر راجستھان میں اجمیر شریف درگاہ کے اندر موجود ایک چشمے کی ہے جسے وضو کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

وشواس نیوز نے اس تصویر کے حوالے سے چشتی فاؤنڈیشن کے چیئرمین اور درگاہ اجمیر شریف کے صدر حاجی سید سلمان چشتی سے رابطہ کیا۔ انہوں نے تصدیق کی ہے کہ یہ اجمیر شریف درگاہ کے اندر موجود چشمہ ہے جو وضو کے لیے استعمال ہوتا ہے۔

انہوں نے بتایا، ‘یہ کوئین میری ہوز کے نام سے جانا جاتا ہے۔ 22 دسمبر 1911 کو ملکہ مریم نے درگاہ پر آکر اسے وقف کیا تھا۔

واضح رہے کہ وارانسی کی گیانواپی مسجد کے سروے کو جوڑ کر وائرل ہونے والی دونوں تصویروں کا تعلق وارانسی سے نہیں ہے۔

غور طلب ہے کہ اتر پردیش کے وارانسی ضلع میں تیسرے دن بھی سخت حفاظتی انتظامات کے درمیان گیانواپی مسجد کمپلیکس کے سروے اور ویڈیو گرافی کا کام مکمل کیا گیا۔ پی ٹی آئی زبان کی رپورٹ کے مطابق سروے کے لیے بنائے گئے کمیشن کو پورے کیمپس کی ویڈیو گرافی کرکے 17 مئی تک رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔ اس کام کے مکمل ہونے کے بعد سوشل میڈیا پر کئی تصویریں شیئر کی گئیں جس میں دعویٰ کیا گیا کہ یہ سروے کے دوران احاطے میں ملی شیولنگ کی تصویر ہے۔

عدالت کی طرف سے سخت رازداری کی ہدایات کی وجہ سے، سروے سے کیا نکلا اس کے بارے میں کوئی سرکاری یا تصدیق شدہ معلومات کو عام نہیں کیا گیا ہے۔ اس لیے وشواس نیوز سروے کے حوالے سے ہندو اور مسلم فریقوں کے دعووں کی نہ تو تصدیق کرتا ہے اور نہ ہی تردید کرتا ہے۔ تاہم، ہم اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ اوپر وائرل ہونے والی دونوں تصویریں وارانسی سے متعلق نہیں ہیں۔

نتیجہ: وارانسی کے گیانواپنی مسجد میں شیولنگ ملنے کے دعوی کے ساتھ وائرل ہو رہی ہے تصویر اوڈیشہ کے بالاسور واقع چندریشور مندر کی ہے۔ دوسرے جانب چشمہ ملنے کے دعوی کے ساتھ وائرل ہو رہی تصویر راجستھان کے اجمیر شریف درگاہ کی ہے۔

  • Claim Review : وارانسی کی گیانواپی مسجد میں سروے کے دوران ملی شیولنگ کی تصویر
  • Claimed By : Srinivas Mogulapally
  • Fact Check : گمراہ کن
گمراہ کن
فرضی خبروں کی نوعیت کو بتانے والے علامت
  • سچ
  • گمراہ کن
  • جھوٹ‎

مکمل حقیقت جانیں... کسی معلومات یا افواہ پر شک ہو تو ہمیں بتائیں

سب کو بتائیں، سچ جاننا آپ کا حق ہے۔ اگر آپ کو ایسے کسی بھی میسج یا افواہ پر شبہ ہے جس کا اثر معاشرے، ملک یا آپ پر ہو سکتا ہے تو ہمیں بتائیں۔ آپ نیچے دئے گئے کسی بھی ذرائع ابلاغ کے ذریعہ معلومات بھیج سکتے ہیں۔

ٹیگز

اپنی راے دیں
مزید پڑھ

No more pages to load

متعلقہ مضامین

Next pageNext pageNext page

Post saved! You can read it later